چند ہی ماہ قبل میرے حقیقی بڑے بھائی محمد سلیمان کیلانی مورخہ 2 نومبر 1988ء کو ہمیں داغِ مفارقت دے گئے، یہ صدمہ ابھی بھولا بھی نہ تھا کہ مورخہ 17 فروری سئہ 1989ء بمطابق 10 رجب المرجب سئہ 1409ھ میں میرے حقیقی چچا جناب حافظ عبدالحئی صاحب ولد مولوی امام الدین صاحب کیلانی بھی بعمر 96 سال قمری بمقام کوٹ چاندی عالم جاودانی کو سدھار گئے ﴿إِنَّا لِلَّـهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعُونَ ﴿١٥٦﴾...البقرة" اللہ تعالیٰ آپ کی خطاؤں سے در گزر فرمائے، اعمالِ صالحہ کو قبول فرمائے اور انہیں جنت الفردوس میں بلند درجات پر فائز فرمائے آمین۔
ابتدائی تعلیم
آپ 13 رجب المرجب 1313ھ بمطابق یکم نومبر سئہ 1895ء کو بمقام حضرت کیلیانوالہ (ضلع گوجرانوالہ) پیداہوئے۔ ابتدائی تعلیم اپنے والدِ بزرگوار مولوی امام الدین صاحب سے حاصل کی، مولوی امام الدین صاحب (یعنی میرے دادا مرحوم) ایک جید اور معروف عالمِ دین تھے۔ جنہوں نے مدرسہ غزنویہ امرتسر سے اکتسابِ علم کیا تھا۔ علم النحو اور عربی زبان میں آپ کی مہارت کا اندازہ اس بات سے کیا جا سکتا ہے کہ سب سے پہلے بخاری شریف پر اعراب آپ ہی نے لگائے تھے۔ عالم دین ہونے کے علاوہ آپ اعلیٰ درجہ کے خوشنویس بھی تھے۔ تیسیر الباری (شرح صحیح بخاری) جو علمائے غزنویہ کے زیر اہتمام تحت السطور ترجمہ اور حواشی کے ساتھ تیس پاروں کی شکل میں شائع ہوئی۔ اس کا متن آپ نے، اور ترجمہ اور حاشیہ آپ کے بھائی محمد الدین نے کتابت کیا تھا۔ اگرچہ آپ اردو عربی ہر دو رسم الخط کے ماہر تھے تاہم زیادہ تر شغف عربی کی کتابت سے ہی تھا
عبدالرحمن کیلانی
1989
  • اپریل