جناب مسیح ﷤ کا خود کے بارے میں دعوائے نبوت نہ کہ دعوائے اُلوہیت !
1.     قرآن مجید نے تو واضح الفاظ میں مسیح ﷤ کے رسول ہونے کی صراحت کی ہے ۔اللّٰہ تعالیٰ کا ارشاد ہے :
﴿مَا المَسيحُ ابنُ مَريَمَ إِلّا رَسولٌ قَد خَلَت مِن قَبلِهِ الرُّسُلُ وَأُمُّهُ صِدّيقَةٌ كانا يَأكُلانِ الطَّعامَ انظُر كَيفَ نُبَيِّنُ لَهُمُ الءايـٰتِ ثُمَّ انظُر أَنّىٰ يُؤفَكونَ ﴿٧٥﴾... سورة المائدة
خاور رشید بٹ
2017
  • ستمبر
قرآنِ کریم اور بائبل کے تناظر میں
اعتراض: قرآنِ مجید نے کئی مقامات پر جناب مسیح ﷤ کو ’کلمۃ اللّٰہ‘ اور ’روح اللّٰہ‘ قرار دیا ہے جبکہ اللّٰہ تعالیٰ کا ’کلمہ‘ ازلی ہے، مخلوق نہیں۔ اسی طرح ’روح اللّٰہ‘ سے مراد اللّٰہ تعالیٰ کی اپنی حیات ہے اور یہ بھی اَزلی ہے، لہٰذا مسیح ﷤ ازلی و ابدی ہوئے اور یہ الٰہی خاصہ ہے ۔
خاور رشید بٹ
2017
  • نومبر