• ستمبر
1985
عبدالرحمن عاجز
بنت ملت کو نہ بے پردہ پھرائے کوئی                       دین اسلام پرچرکا نہ لگائے کوئی
خود جو پھرتی ہو نقاب اپنا اٹھائے کوئی             اس کوفتنوں سے بھلا کیسے بچائے کوئی
لاتبرجن سے واضح ہے مقام پردہ                   رسم فرسودہ نہ پروے کو بتائے کوئی