ڈاونلوڈ

آن لائن مطالعہ

آن لائن مطالعہ
  • مئی
2005
محمد اسماعیل قریشی
فرسودہ خيالات اور دقيانوسى روايات كى دورِ جديد ميں قطعى كوئى گنجائش نہيں-عرصہ دراز ميں زمانہ ترقى كى منزليں طے كرتا ہوا اس مقام پر پہنچ گيا ہے كہ ماضى سے اس كا رشتہ كٹ چكا ہے- سائنس، ٹيكنالوجى اور معاشى ترقى كى تيز رفتار دوڑ ميں مذہب زمانہ كا ساتھ نہيں دے سكتا- چادر، چارديوارى، حجاب، اسكارف اور داڑهى ملا كا دين اور پسماندگى كى نشانى ہے-
  • مئی
2005
عبد الرحمن مدنی
گذشتہ شمارے ميں بعض اُصولى تصورات كے نكهاركے بعد اس موضوع كے نماياں پہلووں كو چند سوالات (تنقیحات) كى صورت ميں ہم پيش كرتے ہيں جن پرمستقل بحث آگے آرہى ہے :
1. پارلیمانى اجتہاد سے مقصودپہلى مدوّن فقہوں پر كسى نئى تدوين كا اضافہ ہے يا كسى نئى فقہ كو قانونى حيثيت دے كر لوگوں كو اس كا پابند بنانا؟ جسے عربى ميں تقنين كہتے ہيں-
  • مئی
2005
حافظ ثناء اللہ مدنی
سوال: درج ذيل احاديث كے بارے ميں مكمل تحقيق دركار ہے- جزاك اللہ خيرًا
حدثنا موسىٰ بن اسماعيل ثنا أبان ثنا يحيىٰ عن أبي جعفر عن عطاء بن يسار عن أبي هريرة قال بينما رجل يصلى مسبلًا إزاره إذ قال له رسول الله ﷺ اذهب فتوضأ فذهب فتوضأ ثم جاء ثم قال اذهب فتوضأ فذهب فتوضا ثم جاء فقال له رجل: يا رسول الله! مالك أمرته أن يتوضأ قال إنه كان يصلى وهو مسبل إزاره وإن الله جل ذكره لايقبل صلوٰة رجل مسبل إزاره“
  • مئی
2005
سعید مجتبیٰ سعیدی
اس شمارے ميں دو مضامين شائع كيے جارہے ہيں جن ميں كهڑے ہوكر كهانے پينے اور كهڑے ہوكر پیشاب كرنے كى اجازت كو پيش كيا گيا ہے اور ان سلسلے ميں اجازت پر مبنى تمام احاديث كو يہاں ذكر كيا گيا ہے ليكن ان احاديث كا مدعا اس سے زيادہ نہيں كہ يہ بتايا جائے كہ كهڑے ہوكر كهانا پينا يا پیشاب كرنا مطلقاً حرام نہيں ہيں بلكہ ضرورت كے پيش نظر شریعت سے ايسا كرنے كا جواز مل سكتا ہے۔
  • مئی
2005
عمران ایوب لاہوری
حالات كى نوعيت كچھ اس طرح كى ہے كہ جدت پسندى اور مغربى تہذيب سے مرعوبيت روز بروز مسلمانوں ميں مہلك وائرس كى طرح پھیلتى جارہى ہے جس كى ايك كڑى يہ بهى ہے كہ ايئرپورٹس، ہوٹلز اور ريسٹورنٹس وغيرہ ميں مغربى طرز كے پيشاب خانے اور باتھ روم بنائے جارہے ہيں جن ميں بہرصورت كهڑے ہوكر ہى پيشاب كرنا پڑتا ہے۔
  • مئی
2005
حافظ انس نضر

امام زرکشی رحمہ اللہ کے مختصر حالات زندگی۔

نام و نسب: امام زركشى كا پورا نام محمد بن عبد اللہ بن بہادر ہے۔بعض كے نزديك ان كے باپ كا نام بہادر بن عبد اللہ ہے ۔

كنيت ابو عبد اللہ، جبكہ نسب زركشى اور مصرى ہے۔تركى الاصل اور شافعى المسلك ہيں۔