عبادت اک تجارت ہے                                 منافع جس کا جنت ہے
جنون خدمت انسان                                 شعورآدمیت ہے
بدی خوش رنگ ہے بے حد                           مگر اس میں ہلاکت ہے
رضائے رب پر  راضی رہ                                 یہی تیری سعادت ہے
سبب بن جائے بخشش کا                                 وہ بیماری بھی رحمت ہے
تو جس پیکر پہ ہے نازاں                                  فقط ایک خاک تربت ہے
نہاہت ہی نہیں جس کی                                  وہ حرص مال ودولت ہے
ثمر صدق ومحبت کا                                              رضا وصبر وطاعت ہے
خدا کے خوف سے رونا                                   صلہ اس کا مسرت ہے
 زوال حب زر عاجز
 کمال آدمیت ہے