بنت ملت کو نہ بے پردہ پھرائے کوئی                       دین اسلام پرچرکا نہ لگائے کوئی
خود جو پھرتی ہو نقاب اپنا اٹھائے کوئی             اس کوفتنوں سے بھلا کیسے بچائے کوئی
لاتبرجن سے واضح ہے مقام پردہ                   رسم فرسودہ نہ پروے کو بتائے کوئی
سامنےمعنی عورت ہواگر عورت کے                غیر محرم کے نہ پھر سامنےآئے کوئی
بے حجابی سے شرافت کاگلاگھٹتا ہے                 بے حجابی کو گلے سے نہ لگائے کوئی
چاردیواری وچادر  میں ہے عورت کاوقار              کسی صورت نہ وقار  اپنا گنوائے کوئی
خود نمائی پہ رہیں لاکھ بضد مستورات                    لفظ مستور کامفہوم بتائے کوئی
عزت زن کی ضمانت ہے یہ پردہ لاریب              کبھی پردے کا تمسخر نہ اُڑائے کوئی
صاف آجائےگا پھر سامنے عورت کا مقام              حکم قرآں جو سنے اور سنائے کوئی
ہے ہر ایک کے لئے اک حد شریعت عاجز       اس سے آگے نہ قدم اپنا بڑھائے کوئی!