طائر ذکر پیمبرؐ مائل پرواز ہے                                یہ زمین کیا آسماں بھی فرش پاانداز ہے
آپؐ کےحسن تخاطب میں وہ سوزوساز ہے        زرہ زرہ دو جہاں کا گوش برآزاز  ہے
رفتہ رفتہ پھول کھلتے ہیں چمن میں جس طرح           ہاں لب کے کھلنے کا یہی انداز ہے
قیصروکسریٰ کے ایوانوں میں آئے زلزلے         آپؐ کی دعوت کا مکہ میں ابھی آغاذ ہے
قتل کی نیت سے جو آیا مسلمان ہوگیا                     اللہ اللہ آپؐ کی صورت کایہ اعجاز ہے
رحمۃ اللعالمینؐ ہیں بس ختم المرسلیںؐ                   آپؐ کا کیا وصف ہے کیا آپکاؐ اعزاز ہے
یہ بھی آنحضرتؐ کی سچائی کی ہے عاجز دلیل    ہر بشر کے قول سے قول آپؐ کا ممتاز ہے