زندگانی کا اعتبار نہیں                       اس پہ انساں کا اختیار نہیں
              دل لگانے سے فائدہ کیا ہے                یہ جہاں جبکہ  پائدار نہیں
         جال حرص وہوس نے پھیلائے                  آرزوؤں کا کچھ شمار نہیں
         کیا خبر کتنے سانس باقی ہیں                      ہم گناہوں پہ شرمسار نہیں
         کوئی آتا ہے کوئی جاتا ہے                      یاں کسی کو بھی کچھ قرار نہیں
           موت کو یاد رکھ سدا غافل                     سخت منزل ہے رہگزار نہیں
           امتحاں ہر قدم پر ہے تیرا                    تجھ کو احساس مرے یار نہیں
           آج موقعہ ہے فکر فردا کر                    کل  پہ کچھ تجھ کو اختیار نہیں
ہے خدا یا ترا ہی فضل و کرم
اہل دنیا وفاشعار نہیں!