مرقد پہ اُن کےآج کوئی نوحہ خواں نہیں !
اے صانع ِ ازل تری صنعت کہاں نہیں !       ہےکونسا جہاں تراجلوہ جہاں نہیں
یہ اضطرابِ شوق یہ رعب جمال دوست            میری زباں بھی آج مری ترجمان نہیں
سوز ِ غم فراقِ مسلسل کےباوجود                                                                                                                                                                           آنگھوں میں کوئی اشک ،زباں پرنغاں نہیں
گردِ غبار  راہ کومنزل سمجھ لیا                          منزل سےروشناس ابھی کاروال نہیں
کب سہہ سکیں گےمشکل راہ وفا کوآپ         جب موجزن ہی سینے میں عزمِ جواں نہیں
مانا تری جفا خموشی جواب ہے                       یہ بھی نہ توسمجھ مرے منہ میں زبان نہیں
حاصل ہیں جس بشر کوجہاں بھر کی نعتیں     وہ بھی یہ کہہ رہاہےکہ میں شادماں نہیں
انسان ہی کےاپنےعمل کاہےیہ مال             اس کےلیے کہیں بھی جوجائے اماں نہیں
چوٹیں نہ سہہ سکے گازبانِ درشت کی           یہ دل ہےایک آئینہ سنگِ گراں نہیں
جودین کےنشاں تھے بہررنگ اعتبار           اب نام کوبھی دہرمیں ان کانشاں نہیں
سائل ہواورآکےتہی دست لوٹ جائے      ایسا تواےکریم تراآستاں نہیں !
ہودن کی روشنی کہ اندھیرا ہورات کا            کوئی عمل بشر کاخدا سےنہاں نہیں
ہوکر رہیں گےقبر وقیامت کےواقعات       یہ وحی آسمان ہےکوئی داستاں نہیں
دالداد گانِ عشرت ِ دنیا کا ہےیہ حال             مرقد پہ ان کےاج کوئی نوحہ خواں نہیں
                عاجز         توکامرانی                   عقبیٰ        خدا سےمانگ
                دنیا            کاکامراں                  توکوئی       کامراں نہیں !