جو خدا کے در کا غلام ہے         وہ  زمانے بھر کا امام ہے
جہاں فرق آیا نہ آج تک         وہ مرے خدا کا نظام ہے
تری ابتداء ہے نہ انتہا             تری ذات کو ہی دوام ہے
نہ مکاں رہے نہ مکیں رہے            یہ جہاں فنا کا مقام ہے
یہاں جو بھی آیا چلا گیا              یہاں کب کسی کو قیام ہے
تجھے آج یہ بھی خبر نہیں              یہ حلال ہے یا حرام ہے
پڑھو قل ھو اللہ احد                   کہ یہ عزوجل کا کلام ہے
تیری ذات اللہ الصمد              یہ شرف یہ تیرا مقام ہے
تو ہے لم یلد تو ولم یولد       بھلا اس میں کس کو کلام ہے
تو ہے پاک از کفوا احد             بس اسی پہ بات تمام ہے
کیوں نہ خوش ہو عاجز بے نوا
کہ وہ  اپنے رب کا غلام ہے