ان کا دامن پھول چُن چُن کر سجاتی رہ گئی

زندگی کی ہر ادا دل کو لبھاتی رہ گئی

ان کی آمد باعث تزئین صد گلشن ہوئی

ہر کلی فرط حیا سے منہ چھپاتی رہ گئی

اک جھلک دیکھی تھی حسن جانفرا کی دُور سے

چشم نرگس فرط حیرت سے لجاتی رہ گئی

غنچہ و گل ہر قدم دامن کشی کرتے رہے

بلبل رنگیں نوا نغمے سناتی رہ گئی

آبشاروں نے بکھیرے نغمہائے دلفروز

موج دریا رقص کرتی گنگناتی رہ گئی

بے نیازانہ وہ گزرے اس ہجوم شوق سے

حسن کی ہی اک ادا ان کو بلاتی رہ گئی

جلوہ حسن ازل بھی ناز پرور بن گیا

بے نیازی کی ادا دامن بچاتی رہ گئی

ان کی یادوں نے دیا تھا جذب دل کو اک ثبات

ترک الفت سے جنوں کی بے ثباتی رہ گئی

ہم نے ہی اسرار آنکھیں پھیر لیں دیوانہ وار

زندگی ہر ہر قدم پر مسکراتی رہ گئی

۔۔۔۔۔۔۔:::::۔۔۔۔۔۔