میرے پسندیدہ۔۔

اس صفحہ کو پسند کرنے کے لیے لاگ ان کریں۔
Powered By JFBConnect

اے کریم میرے جرم آشکار نہ کر
گناہگار کو محشر میں شرمسار نہ کر
جو راہ راہِ نبی ؐ سے ہے مختلف اے د وست
وہ راہ راہِ جہنم ہے اختیار نہ کر
حصول جاہ کا انجام حسرت وغم ہے
حصول جاہ سے راحت کو داغدار نہ کر
تو وقت جرم بانداز فخر ہنستا تھا
مال جرم پہ آنکھ اشکبار نہ کر
جو مال وزر نہیں ساتھی ترا قیامت میں
تو بزم دھر میں اس مال وزر سے پیار نہ کر
گناہ سے کوئی انسان پاک وصاف نہیں
گناہ کوئی ہو لیکن تو بار بار نہ کر
جسے حدیث پیمبرِؐ پہ اعتبار نہیں
وہ معتبر نہیں تو اس کا اعتبار نہ کر
عمل عمل ہے وہی خود جسے تو کر پائے
کسی عمل کا کسی پر تو انحصار نہ کر
خدا کے ذکر سے دل کو قرار ملتاہے
نہ چھوڑ ذکر خدا دل کو بے قرار نہ کر
جوکاروبار تری آخرت بھلا ڈالے
تو بھول کر بھی وہ دنیا میں کاروبار نہ کر
بہار گلشن عالم خزاں گزیدہ ہے
بہار گلشن عالم پہ دل نثار نہ کر
ہے اقتدار کا یہ بار ایک بار گراں
سکوں کی حرص ہے گرحرص اقتدار نہ کر
حدود شرع سے آگے ہے وادی دوزخ
حدود شرع کوہرگز کبھی تو پار نہ کر
وہ وقت ہے آئے نہ آئے ہے کیا خبر عاجز
برائے توبہ بڑھاپے کاانتظار نہ کر۔