امام ابو القاسم طبرانیؒ ایک بلند پایہ محدث علم و فضل کے جامع حفظ و ضبط ثقاہت واتقان میں بلند مرتبہ تھے ان کے معاصر علمائے کرام اور ارباب کمال محدثین نے ان کے حفظ وضبط اور ثقاہت کا اعتراف کیا ہے اور ان کے صدق و ثقات پر علمائے فن کا اتفاق ہے ۔علامہ شمس الدین ذہبیؒ (م748ھ) فر ما تے ہیں ۔کہ)

"امام ابو القاسم طبرانی ؒ ضبط و ثقاہت اورصدق وامانت کے ساتھ بڑے عظیم رتبہ اور شان کے محدث تھے حافظ ابن عسقلانی ؒ (م852ھ) اور علامہ ابن العماد الحنبلیؒ (م1089ھ)نے بھی ان کے حفظ و ضبط اور صدق وامانت کا اعتراف کیا ہے ۔ امام طبرانی ؒ بڑے وسیع العلم تھے حدیث میں ان کی وسعت نظر اور کمال کا بھی علماء نے اعتراف کیا ہے حافظ ذہبیؒ (م748ھ) فر ما تے ہیں کہ:

حدیث کی کثرت اور علوئے اسناد میں ان کی ذات نہایت ممتاز تھی اور حدیث میں ان کی بالغ نظری کا پوری دنیا ئے اسلام میں چر چا تھا حضرت شاہ عبد العزیز محدث دہلوی ؒ (م 1229 ھ) لکھتے ہیں کہ حدیث میں وسعت اور کثرت روایت میں وہ یکتا اور منفرد تھے امام ابو القاسم طبرانیؒ میں دینی غیرت و حمیت بہت زیادہ تھی اور دین کے

معاملہ میں کسی قسم کی مداہنت کے قائل نہ تھے حافظ ابن جوزیؒ (م597ھ) لکھتے ہیں کہ امام طبرانی ؒ دین کے معاملہ میں نہایت سخت تھے ۔

۔امام طبرانیؒ کو صحابہ کرام رضوان اللہ عنہم اجمعین سے غیر معمولی محبت و عقیدت تھی ۔اور صحابہ کرام رضوان اللہ عنہم اجمعین سے متعلق معمولی سی تنقیص بھی گوارا نہیں کرتے تھے چنانچہ آپ کی اس غیر معمولی محبت و عقیدت کی وجہ سے فرقہ قرامطہ اور اسمٰعیلیہ کے لو گ آپ کے مخالف ہو گئے اور ان لو گوں نے آپ پر سحر کردیا جس کی وجہ سے آپ کی آنکھوں کی بصارت جاتی رہی۔ امام طبرانی ؒ کے فقہی مسلک کے بارے میں اختلاف ہے مگر مولانا عبد الحلیم چشتی مرحوم نے عجالہ نا فعہ کی شرح میں ان کو شافعی المسلک بتایا ہے ۔

تصنیفات :

امام ابو القاسم طبرانی ؒ صاحب تصانیف کثیرہ تھے آپ کی جو تصانیف مل سکی ہیں اُن کی فہرست درج ذیل ہے ۔

1۔کتابالاوائل ۔۔۔۔۔۔۔2۔کتاب التفسیر

3۔کتاب المنا سک ۔۔۔۔۔۔۔۔4کتاب العشرۃ النساء

5۔کتاب السنتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔6۔کتاب الطوالات

7۔کتاب النواور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔8۔کتاب دلائل النبوۃ

9۔کتاب مسند شعبہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔10۔کتاب مسند سفیان

11۔کتاب حدیث الشامیین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔12۔کتاب الرمی

13۔مسند العشر ۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔14۔معرفۃ الصحا بۃ

15۔فوائد معر لۃ الصحابۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔16۔مسند ابی ہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ

17۔مسند عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔18۔حدیث الاعمشؒ

19۔حدیث الاوزاعی ؒ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔20۔حدیث شیبان ؒ

21۔حدیث ایوب رضی اللہ تعالیٰ عنہ ۔۔۔۔۔۔۔22۔مسند ابی ذر رضی اللہ تعالیٰ عنہ

23۔کتاب الرویہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔24۔کتاب الجود

25۔العلم الالویہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔26۔فضل رمضان

27۔کتاب الفرائض ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔28کتاب الرد علی المتزلہ

29۔کتاب الرد علی الجہیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔30حکارم اخلاق الفراء

31۔الصلوٰۃ علی رسول صلی اللہ علیہ وسلم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔32۔کتاب الماموم

33۔کتاب الغسل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔34۔کتاب افضل العلم

35۔کتاب ذم الری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔36۔کتاب تفسیر الحسن

37۔کتاب الزہری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔38۔کتاب ابن المنکدرعن جابر

39۔مسند ابی اسحاق السبیعی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔40۔حدیث یحییٰ بن ابی کثیر

41۔حدیث مالک بن دینار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔42۔کتاب ماروی الحسن عن انس

43۔حدیث ربیعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔44۔حدیث حمزہ الزمات

45۔حدیث مسر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔46۔حدیث ابی سعد البقال

47۔طرق حدیث من کذب علی ۔۔۔۔۔۔۔48۔کتاب النوح

49۔مسند ابن حجادۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔50کتاب من اسم عطاء

51۔کتاب من اسمہ شعبۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔52۔کتاب اخبار عمر بن عبد العزیز

53۔کتاب اخبار عبد العز یز بن رفیع ۔۔۔۔۔54۔مسند روح ابن القا سم

55۔کتاب فضل عکرمہ ۔۔۔۔۔۔۔56۔کتاب امہات النبی

57۔مسند عمارہ بن غزیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔58مسند طلحہ بن مصرف جماعۃ

59۔مسند العبادلۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔60۔احادیث ابی عمرو بن العلاء

61۔کتاب غرائب مالک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔62۔جزوابان بن تغلب

63۔جزو حریث ابن ابی مطر ۔۔۔۔۔۔۔۔64۔وصیۃ ابی ہریرۃ

65۔مسند الحارث العکلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔66۔فضائل الاربعۃ الراشدین

67۔مسند ابن عجلان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔68۔کتاب الاشربہ

69۔کتاب الطہارۃ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔70۔کتاب الامارۃ

71۔مسند ابی ایوب الافریقی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔72۔مسند زیاد الجصاص

73۔مسند زافر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔74۔حدیث شعبہ

75۔کتاب من اسمہ عیاد

76۔کتاب الدعاء :امام طبرانی ؒ کی مشہور کتاب ہے اس میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی تمام ادعیہ کو جمع کیا گیا ہے اور اس کے ساتھ دعاء کے فضائل وآداب بھی بیان کئے گئے ہیں آخری باب میں آیت کریمہ ﴿ادعونى أَستَجِب لَكُم﴾کی تفسیر کی گئی ہے

77۔معجم کبیر 78،معجم اوسط ،79،معجم صغیر ،

امام طبرانیؒ کی حدیث میں یہ تینوں کتابیں بہت مشہور اور اہم ہیں حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلویؒ (م1176ء ) نے ان کو حدیث کے تیسرے طبقہ میں شمار کیا ہے محدثین کی اصطلاح میں معجم ان کتابوں کو کہا جا تا ہے جن میں شیوخ کی تر تیب پر حدیثیں درج کی گئی ہیں

معجم کبیر : اس میں صحابہ کرام رضوان اللہ عنہم اجمعین کی تر تیب پر ان کی مرویات شامل کی گئی ہیں ۔اور اس میں مشہور صحابی حضرت ابو ہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ (م57ھ) جن کی مرویات کی تعداد 5364ہے اس میں شامل نہیں ہیں یہ کتاب 12جلدوں میں ہے اور اس میں 60ہزار احادیث جمع کی ہیں ۔

معجم اوسط : اس کتاب کو بھی امام طبرانیؒ نے شیوخ کے ناموں پر مرتب کیا ہے اس کی تر تیب و تالیف میں امام صاحب نے بڑی کا وش اور محنت کی آپ کو یہ کتاب بہت عزیز تھی اس کتاب سے امام صاحب کی حدیث میں فضیلت و کمال اور حدیث سے کثرت واقفیت کا پتہ چلتا ہے یہ کتاب 6ضخیم جلدوں میں ہے

معجم صغیر :

اس کی ترتیب بھی شیوخ کے ناموں پر ہے اور اس میں ایک ہزار سے زیادہ شیوخ کی ایک ایک حدیث جمع کی ہے یہ 1311ھ میں مطبع انصاری دہلی سے شائع ہوئی

نام و نسب وولادت:

امام طبرانیؒ کا نام سلیمان بن احمد بن ایوب ،کنیت ابو لقاسم ،ماہ صفر 260ھ میں پیدا ہوئے

اساتذہ وتلامذہ :

امام طبرانی کے اساتذہ اور تلامذہ کی تعداد بہت زیادہ ہے امام ذہبی ؒ(م748ھ )نے تذکرۃ الحفاظ میں اور حضرت شاہ محدث دہلوی (م1229ھ)نے بستان المحدثین میں آپ کے مشہور اساتذہ اور تلامذہ کا ذکر کیا ہے

تحصیل علم کے لیے سفر:

امام طبرانیؒ 12سال کے تھے کہ تحصیل علم میں میں مشغول ہو ئے پہلے آپ نے اپنے آبائی وطن طبریہ میں اصحاب علم و فضل سے استفادہ کیا اس کے بعد تحصیل علم کے لیے حمص مدائن شام مکہ معظمہ مدینہ منورہ ،یمن مصر بغداد کوفہ بصرہ جزیرہ اور اصفہان تشریف لے گئے ہر جگہ صاحب علم و فن سے اکتساب فیض کیا

وفات : امام ابو القاسم طبرانی ؒ نے 28ذی قعد ہ 360ھ سوسال کی عمر میں انتقال کیا امام حافظ ابونعیم اصفہانی (م430ھ)نے نماز جنازہ پڑھا ئی
حوالہ جات

۔ذہبی تذکرۃ الحفاظ ج3ص126،

۔ابن حجر عسقلانی لسان المیزان ج3ص173ابن العماد الحنبلی،شذارت الذہب ج2ص30،

۔ذہبی تذکرۃ الحفاظ ج3ص126،

۔شاہ عبد العزیز محدث دہلوی ص54،

۔ابن جوزی المنتظم ج7ص54،

۔شاہ عبد العزیز دہلوی بستان المحدثین ص54،

۔عبد الحلیم چشتی فوائد جامعہ بر عجالہ نافعہ ص80،

۔عبد الحلیم چشتی فوائد جامعہ برعجالہ نافعہ ص80۔81،

۔شاہ عبد العزیز بستان المحدثین ص54،

۔شاہ ولی اللہ محدث دہلوی حجۃ اللہ البالغۃ ج1ص107،

۔سید سلیمان ندوی خطبات مدارس ص53،

۔حاجی خلیفہ بن مصطفی کشف الظنون ج2ص465،شاہ عبد العزیز محدث دہلوی بستان المحدثین ص53،

۔ضیاء الدین اصلاحی تذکرۃ المحدثین ج2ص52،

۔ذہبی تذکرۃ الحفاظ ج3ص126۔

۔ذہبی تذکرۃ الحفاظ ج3 ص126 شاہ عبد اللہ العزیز محدث دہلوی بستان المحدثین ص155،

۔ذہبی تذکرۃ الحفاظ ج3،6،ص12

۔ ذہبی تذکر ۃ الحفاظ ج3 ص126،

۔ابن خلکان وفیات الاعیان ج1 ص313 بن جوزی المنتظم ج7 ص54ذہبی تذکرۃ الحفاظ ج3 ص130،