تیرے دیوانے جو طیبہ کی جناں سے گزرے
روحِ بیتاب پکاری "یہ کہاں سے گزرے"
منزلِ شوق میں ہم سود و زیاں سے گزرے
عجب انداز میں عمرِ گزراں سے گزرے
کارواں تیرے تصور کا جو جاں سے گزرے
دل کا آئینہ رخِ لالہ رُخاں سے گزرے
جو تیرے کوچہ صدر رشکِ جناں سے گزرے
وہ بصد ناز متاعِ دِگراں سے گزرے
جستجو میں کہیں منزل کا تصور بھی نہ تھا
راہ بنتی گئی دیوانے جہاں سے گزرے
لذتِ غم نے دیا خوب سہارا دل کو
بے نیازی سے جہانِ گزراں سے گزرے
كچھ خبر بھی ہے اس دل کی ہمارے کہ نہیں
جس مسیحا کے لیے منتِ جاں سے گزرے
راہ و منزل کا کہاں ہوش تھا دیوانوں کو
نئے انداز سے گزرے ہیں جہاں سے گزرے
منتظر ہم ہیں سرِ راہِ غم اس کے اسرار
کاش وہ جان، تمنا بھی یہاں سے گزرے