رابطہ عالم اسلامی کے سیکرٹری جنرل ڈاکٹر عبداللہ بن صالح العبید نے امسال حج کے موقعہ پر مکہ مکرمہ میں  رابطہ کی چوتھی سالانہ کانفرنس سے اظہار موافقت کرنے پر خادم الحرمین شریفین شاہ فہد بن عبدالعزیز کاشکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ سعودی حکومت صحیح اسلامی عقائد اور اسلامی دعوت کو  پھیلانے اور بین الریاستی وبین الاسلامی بنیادوں پر اسلامی مشن کی مالی ومعنوی سرپرستی کرنے جیسے نمایاں کارناموں پر مبارکبار کی مستحق ہے۔سیکرٹری جنرل نے ولی عہد مملکت سعودی عرب شہزادہ عبداللہ بن عبد العزیز اور نائب وزیر اعظم وزیر دفاع شہزادہ  سلطان بن عبدالعزیز کی اس ضمن میں کی جانے والی کاوشوں کو بھی سراہا۔
ڈاکٹر العبید نے "امت مسلمہ"اور گلوبلائزیشن کے موضوع پر ہونے والی  رابطہ عالم اسلامی کی اس کانفرنس کے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ اس کانفرنس میں مختلف اہم موضوعات اور اُمت کودرپیش مسائل پر بحث ومباحثوں کے بعد اسلامی کاز(Cause) کو آگے بڑھانے کی جامع منصوبہ بندی کی جائے  گی۔ان پیش آمدہ مسائل  میں اسلامی ممالک میں نفاذ  شریعت ،دعوت وتبلیغ،اُمت کے موجودہ حالات،دورجدید کے فتن مثلاً ذرائع ابلاغ کی گلوبلائزیشن،تعلیم وتربیت پر سامراجی اجارہ داری ،خاتون مسلم کے معاملات میں دخل اندازی اور اسلامی معاشرے کی بنیادی ساخت میں تبدیلی جیسے اہم مسائل شامل ہیں۔علاوہ ازیں اس کانفرنس میں مساجد کی تعمیر ونگہداشت ،دنیا بھر میں مسلم اقلیات کی مدد،ان کے حالات میں تبدیلی کی کوششیں،معاشرے کی تعمیر نو،جدید فقہی مسائل پر غور وفکر اور اُمت کو درپیش دیگر مسائل کو بھی موضوع بحث بنایا جائےگا۔
رابطہ عالم اسلامی کے سیکرٹری جنرل نے گفتگو کر تے ہوئے کہا کہ "رابطہ" کی اس کانفرنس میں دنیا بھرسے مفکرین ،علماء،داعی اور ماہرین تعلیم شرکت کررہے ہیں۔جو ان عملی وفکری نکات پر غور کریں گے جن کے ذریعے اُمت میں اسلام کی خالص تعلیمات کو پھیلایا جائے،نفاذ شریعت کاخواب شرمندہ تعبیر ہو،اس کی مخالفت کرنے والوں کی بیخ کنی ہو،صرف کتاب وسنت کی روشنی سے منورہ دعوت وتبلیغ کی اہمیت کو اجاگر کیا جائے۔اس کے ساتھ ساتھ اسلامی حکومتوں کو اسلامی کاز کی طرف توجہ دلانے اور مسلم تنظیموں کو آپس میں رابطہ بڑھانے اور موثر طور پر اسلامی مشن کوآگے بڑھانے کے لیے بھی سفارشات تیار کی جائیں۔
اپنے بیان کو ڈاکٹر صالح العبید نے دعا پر ختم کرتے ہوئے کہاکہ رابطہ عالم اسلامی کو اپنے پیش نظر اہداف کی ایسے وقت میں بھر پور طور پر مکمل کرنے کی شدید ضرورت ہے۔جبکہ امت مسلمہ پر دنیا بھر مصائب ومشکلات میں روز افزوں اضافہ ہورہاہے۔اور جدید دور کے چیلنجز نے امت کے لیے بے شمار نئے مسائل کو جنم دے دیاہے۔اسی طرح اللہ تعالیٰ سے دعا ہے  کہ وہ خادم حرمین شریفین کا سایہ سلامت رکھے،اور ان سے امت اسلامیہ کو فیض یاب کرتا رہے،اور سعودی حکومت کو اسلام اور مسلمانوں کی اس سے بڑھ کر خدمت کی توفیق مرحمت فرمائے!آمین
یاد رہے کہ ر ابطہ عالم اسلامی کی سب سے پہلی اسلامی کانفرنس ذوالحجہ 1381ھ میں منعقد ہوئی۔دوسری کانفرنس کا انعقاد 1384ھ میں جبکہ تیسری کانفرنس کا1408ھ میں انعقاد ہوا۔ان کانفرنسز میں تیار کی جانے والی سفارشات اور قراردادوں کی روشنی میں اسلام اور مسلمانوں کی مصلحت کے لیے رابطہ کی مختلف کمیٹیاں اور ذیلی تنظیمیں سرگرم رہیں۔