عن محمد بن عبد الله بن سوار بن نویرہ، و طلحة بن الاعلم، و ابو حارثه وابو عثمان، قالوا: بَقِیَت المدینة بعد قتل عثمان رضی اللّٰہ عنه خمسة ایام، وامیرھا لغافقی بن حرب، یلتمسون من یُجِیْیُھُمْ الی القیام بالامر فلا یجدونه۔ یاتی المصریون علیا فیحتبی منھم وَیَلُوْذُ بِحیطان المدنیة، فاذا لقوھم، باعَدَھم وتبرا منھم ومن مقالتھم مرة بعد مرة۔ ویطلب الکوفیون الزبیر فلا یجدونه فارسلوا الیه حیث ھو رُسُلًا: فباعدھم او تبرا من مقالتھم ویطلب المصریون طلحة فاذا لقیھم باعَدَھم وتیرا من مقالتھم مرة بعد مرة، وکانوا مجتمعین علٰی قتل عثمان، مختلفین فیمن یَتوون، فلما لم یجدوا مما لثا ولا مجیبًا جمعھم الشر علی اَولِ من اجابھم وقالوا: لا نُولّی احدا من ھؤلاء الثلاثۃة فبعثوا الی سعد بن ابی وقاص وقالوا انک من اھل الشورٰی فرایُنافیک مجتمع، فَاقَدِم نبایعک۔ فبعث الیھم: اِنِّی واین عمر فرضا منھا فلا حاجة لی فیھا۔ ثم انھم اتوا ابن عمر عبد الله، فقالوا: انت ابن عمر فقم لھذا الامر: فقال: ان ھذا الامر انتقاماً والله لا اتعرض به فالتمسوا غیری۔‘‘ فَبَقُوا حَیَارٰی لا یدرون ما یستون والامر امرھم (ص ۲۳۴)
محمد بن عبد اللہ بن عبد اللہ بن سوار بن نویرہ، طلحہ بن الاعلم، ابو حارثہ اور ابو عثمان سے روایت ہے۔ کہتے ہیں شہادتِ عثمان کے بعد پانچ دن تک غافقی بن حرب امارت کے فرائض سر انجام دیتا رہا۔ یہ لوگ کسی ایسے شخص کی تلاش میں تھے جو امارت قبول کرے لیکن ناکام رہے۔ مصری لوگ حضرت علیؓ کے پاس آئے تو وہ ان سے غائب ہو گئے اور مدینہ کی ایک فصیل میں پناہ لی۔ جب یہ ان سے ملے تو حضرت علیؓ نے ان سے اور ان کے مطالبہ سے بار بار بیزاری کا اظہار کیا۔ اور کوفی لوگ حضرت زبیر کو امام بنانا چاہتے تھے۔ ان لوگوں نے حضرت زبیر کو کہیں نہ پایا۔ تو ان کی تلاش کے لئے آدمی بھیجے۔ حضرت زبیرؓ نے بھی ان سے اور ان کے مطالبہ سے بیزاری کا اظہار کیا۔ اور بصری لوگ حضرت طلحہؓ کو امیر بنانا چاہتے تھے۔ جب یہ ان سے ملے تو انہوں نے بھی ان سے اور ان کے مطالبہ سے بیزاری کا اظہار کیا۔ یہ شر پسند حضرت عثمان کو شہید کر دینے پر متفق تھے مگر نئے امام کے تقرر میں اختلاف رکھتے تھے۔ پھر جب ان لوگوں کو کوئی بھی ایسا آدمی نہ ملا جو ان کے مطالبہ کو قبول کرتا یا جھوٹے وعدہ سے ہی ان کو خوش کر دیتا۔ وہ اس بات پر آمادہ ہو گئے کہ جو امارت قبول کر لے اسے امیر بنا دیا جائے۔ اور کہنے لگے ہم ان تینوں میں سے کسی کو بھی امیر نہیں بنائیں گے۔ انہوں نے حضرت سعد بن وقاص کے پاس بھیجا اور کہا۔ آپ اہل شوریٰ سے ہیں۔ ہم آپ کی امامت پر متفق ہیں۔ سو آگے آئیے ہم آپ کی بیعت کرتے ہیں۔ حضرت سعدؓ نے جواب دیا۔ میں اور عبد اللہ بن عمر دونوں اس معاملہ سے باہر ہیں۔ مجھے اس امارت کی کوئی ضرورت نہیں۔ پھر یہ لوگ حضرت عبد اللہ بن عمرؓ کے پاس آئے اور کہا۔ آپ حضرت عمرؓ کے بیٹے ہیں۔ آپ خلافت کے لئے کھڑے ہوں۔ حضرت عبد اللہ بن عمرؓ نے کہا۔ یہ سب انتقامی کارروائی ہے۔ خدا کی قسم میں اس سے تعرض نہ کروں گا۔ میرے سوا کوئی اور آدمی ڈھونڈو۔ اب یہ لوگ سخت پریشان ہوئے اور نہیں جانتے تھے کہ اس معاملہ میں کیا کریں۔
2-عن محمد وظلحة، قالا: فقالوا لھم: دونکم یا اھل المدینة فقد اجلناکم یومین، فَوَ الله لئٰن لم تفرغوا الثقلین غداً علیًا طلحة والزبیر واناساً کثیراً، فغشی الناس علیًّا۔ فقالوا: فبایعک وقد تری ما انزل بالاسلام وما ابتدینا به من ذوی القربیٰ فقال علی دعونی والتمسوا غیری (۴۳۴)
محمد اور طلحہ کہتے ہیں۔ اب ان لوگوں نے اہلِ مدینہ سے کہا کہ تمہیں دو دن کی مہلت ہے۔ اس دوران کوئی امیر مقرر کر لو۔ ورنہ اگلے دن ہم علیؓ، زبیرؓ اور طلحہؓ کے علاوہ اور بھی بہت سے لوگوں کو قتل کر دیں گے۔ پس لوگ حضرت علیؓ کے گرد ہو گئے اور کہا ہم آپ کی بیعت کرتے ہیں۔ آپ پہلے اسلام لانے والوں سے ہیں اور ذوی القربیٰ سے ہیں۔ حضرت علیؓ نے کہا۔ مجھے چھوڑ دو۔ کوئی دوسرا آدمی تلاش کرو۔
3-عن الشعبی قال: لما قتل عثمان رضی الله عنه اتی الناس علیاً و ھو فی سوق المدینة، وقالوا له، ابسط یدک نبایعک۔ قال لا تَعْجِلوا فان عمر کان رسلًا مبارکًا وقد اوصٰی بھا شوریٰ فامھلُوا یجتمع الناس وتشاورون۔ فارتد الناس عن علیٍّ ثم قال بعضھم، ان رجع الناس الی امصارھم بقتل عثمان ولم یقم بعدہ قائم لھذا الامر لم تامن اختلاف الناس وفساد الامة فعادوا الی علّیٍ فاخذ الاشتر بیدہٖ فقبضھا علی فقال ابعدٍ ثلاثة: اما والله لمن ترکتھا لتقصرن غیثیک علیا حینًا۔ فبایعته العامة۔ او اھل الکوفة یقولون ان اوّل من بایعه اشتر۔ (۴۳۳)
شعبی کہتے ہیں جب حضرت عثمان شہید ہو گئے تو لوگ حضرت علیؓ کے پاس آئے جبکہ وہ مدینہ کے بازار میں تھے۔ اور کہنے لگے ہاتھ بڑھائیے ہم آپ کی بیعت کرتے ہیں۔ آپ نے فرمایا۔ جلدی نہ کرو۔ حضرت عمرؓ بابرکت انسان تھے اور انہوں نے مشورہ کی تاکید فرمائی تھی۔ سو انتظار کرو تاکہ لوگ اکٹھے ہوں اور مشورہ کریں۔ سو لوگ حضرت علیؓ کے پاس سے چلے گئے۔ پھر بعض لوگوں (شر پسندوں) نے کہا۔ اگر ہم لوگ شہادتِ عثمانؓ کے بعد بغیر امیر کے تقرر کے اپنے شہروں کو چلے گئے تو ہماری خیر نہیں۔ اور امت میں فساد ہو گا۔ وہ دوبارہ حضرت علیؓ کے پاس آئے۔ اشتر (نخعی) نے آپ کا ہاتھ پکڑا اور انہیں قابو کیا اور تین بار کہا: اے خائن! خدا کی قسم اگر تو نے اس امارت کو ترک کیا تو ابھی تمہاری آنکھیں نکال دی جائیں گی[1]۔ پھر عام لوگوں نے بیعت کی۔ اہل کوفہ کہتے ہیں کہ سب سے پہلے اشتر نے آپ کی بیعت کی۔
4-عن عبد الرحمان بن جندب عن ابیه قال: لما قتل عثمان رضی الله عنه واجتمع الناس علٰی عَلِیِّ، ذھب الاشتر وجاء بطلحة فقال له ’’دَعْنِی انظر ما یصنع الناس۔ فلم یَدَعَه وجاء به یتلّہ تلَّا عنیفًا وصعد المنبر فَبَایَعَ۔ (۴۳۵)
عبد الرحمٰن بن جندب اپنے باپ سے روایت کرتے ہیں۔ جب حضرت عثمانؓ شہید ہوئے اور لوگ حضرت علی کی خلافت پر متفق ہو گئے تو اشتر گیا اور طلحہؓ کو ساتھ لے آیا۔ حضرت طلحہ کہنے لگے۔ مجھے چھوڑ دو۔ میں دیکھوں گا لوگ اس معاملہ میں کیا کرتے ہیں۔ لیکن اس نے نہ چھوڑا اور سختی کے ساتھ کھینچ کر لے آیا۔ چنانچہ وہ منبر پر چڑھے اور بیعت کی۔
5-عن الحارث ابو البی: قال جاء حکیم بن جبلة بالزبیر حتی باَیَع: فکان الزبیر یقول: جاءنی لص من لصوص عبد القیس فبایعت واللج عَلٰی عنقی (۴۳۵)
حارث ابو البی کہتے ہیں۔ حکیم بن جبلہ حضرت زبیر کو لے کر آیا حتّٰی کہ انہوں نے بیعت کی۔ حضرت زبیر کہا کرتے تھے۔ عبد القیس کے چوروں میں سے ایک چور میرے پاس آیا اور میں نے بیعت کی جبکہ تلوار میری گردن پر تھی۔
6-عن محمد بن حنفیة قال کنت مع ابی حین قتل عثمان رضی الله عنه، فقام فدخل منزله، فاتاہ اصحاب رسول الله ﷺ فقالوا ان ھذا الرجل قد قُتِل، ولا بُدَّ للناس من ایام ولا نجد الیوم احدًا احق بٰھذا الامر منک، لا اقدم سابقة ولا اقرب من رسول الله ﷺ۔ فقال: لا تفعلوا فانی اکون وزیرًا خَیْرٌ من ان اکون امیرًا، فقالوا ولا والله ما نحن بقا علین حتی نبایعک: قال ففی المسجد، فان بیعتی لا تکون خفیًا ولا تکون الا عن رضا المسلمین۔‘‘ قال سالم بن ابی الجعد، فقال عبد اللّٰہ بن عباس لقد کرھت ان یاتی المسجد مخافة ان یشغب علیه وَاَبٰی ھو الا المسجد، فلما دخل المھاجرون والانصار یبایعوہ نم بایعه الناس۔
محمد بن حنفیہ کہتے ہیں۔ جب حضرت عثمان شہید ہوئے تو میں اپنے باپ (حضرت علیؓ) کے ساتھ تھا۔ آپ کھڑے ہوئے پھر ان کے گھر میں داخل ہوئے تو حضور اکرم ﷺ کے صحابی آپ کے پاس آئے اور کہنے لگے۔ حضرت عثمان تو شہید ہو گئے اور امام کے بغیر لوگوں کے لئے کوئی چارہ نہیں۔ اور ہم آج امارت کے لئے آپ سے زیادہ مناسب کوئی آدمی نہیں دیکھتے۔ مسابقت فی الاسلام کی وجہ سے بھی اور حضور ﷺ کے ساتھ قرابت کی وجہ سے بھی۔ حضرت علیؓ نے کہا۔ ’’ایسا نہ کرو۔ میں امیر بننے سے زیادہ وزیر بننا پسند کرتا ہوں۔‘‘ لوگوں نے کہا۔ ’’خدا کی قسم! ہم تو آپ ہی کی بیعت کریں گے۔‘‘ حضرت علیؓ نے کہا۔ ’’تو پھر یہ مسجد میں ہو گی۔ میری بیعت خفیہ طریقے سے یا مسلمانوں کی رضا مندی کے بغیر نہیں ہو سکتی۔‘‘ سالم بن ابی جعد کہتے ہیں کہ عبد اللّٰہ بن عباس نے کہا کہ میں حضرت علیؓ کے مسجد میں جانے کو ناپسند کرتا تھا مبادا کوئی آفت نہ پڑ جائے۔ مگر علیؓ نے مسجد کے سوا کچھ تسلیم نہ کیا۔ جب وہ داخل ہوئی تو مہاجر اور انصار بھی داخل ہوئے۔ سو انہوں نے بیعت کی۔ پھر عام لوگوں نے بیعت کیا۔
7-عن عبد الله بن الحسن قال لما قتل عثمان رضی الله عنه بایعت الانصار علیًّا الا نُقیرا یسیرا، منھم حسان بن ثابت، وکعب بن مالک ومسلمه بن مخلّد، وابو سعید الخدر، ومحمد بن مسلمة والنعمان بن بشیر وزید بن ثابت، ورافع بن خدیج، وفقاله بن عبید، وکعب بن عجرۃ کانوا عثمانیه۔ قال: وحدثنی مَن سمع الزھری یقول: ھرب قوم من المدینة الَی الشام فلم یبایعوا علیا، ولم یبایعه قد امة بن مظعون، وعبد الله بن سلام والمغیرة، ابن شعبة وقال الاخرون: انَّھا بایع طلحة والزبیر کرھًا۔ وقال بعضھم لم یبایعه الزبیر (۴۳۰)
عبد اللہ بن حسن کہتے ہیں کہ جب حضرت عثمانؓ شہید ہو گئے تو انصار نے حضرت علیؓ کے ہاتھ پر بیعت کی سوائے چند اشخاص کے۔ حسان بن ثابت، کعب بن مالک۔ مسلمہ بن مخلد، ابو سعید خدری، محمد بن مسلمہ، نعمان بن بشیر، زید بن ثابت، رافع بن خدیج، فضّالہ بن عبید، کعب بن عُجرہ انہی میں سے تھے اور یہ سب حضرت عثمان کے حامی تھے۔ راوی کہتا ہے۔ مجھ سے اس شخص نے بیان کیا جس نے زہری سے سنا کہ ایک قوم مدینہ سے شام کی طرف بھاگ گئی اور حضرت علیؓ کی بیعت نہ کی اور قدامہ بن مظعون عبد اللہ بن سلام، مغیرہ بن شعبہ  نے بھی بیعت نہ کی۔ بعض کہتے ہیں کہ حضرت طلحہؓ اور زبیر نے بھی جبری بیعت کی تھی۔ اور بعض کہتے ہیں کہ حضرت زبیرؓ نے بیعت نہیں کی تھی۔
حضرت علیؓ کی بیعت کا قصہ تاریخ کی دوسری مشہور کتب میں بھی مذکور ہے۔ اب ہم اس واقعہ کو تسلسل کے ساتھ بیان کریں گے اور جہاں ضرورت ہوئی تو دوسری کتب کا صرف اردو ترجمہ (بغیر متن) پیش کیا جائے گا۔ یا تائید کے طور پر ان کا حوالہ درج کر دیا جائے گا۔
شہادت عثمانؓ کے وقت باغی اور شورش پسند عنصر مدینہ پر چھایا ہواتھا۔ انہوں نے شہر کی ناکہ بندی کی ہوئی تھی۔ بہت سے صحابہ تو حج پر تشریف لے جا چکے تھے باقی دل شکستہ اور سہمے ہوئے تھے۔ پورے شہر کا نظم و نسق باغیوں میں سے ہی ایک شخص غافقی بن حرب کے ہاتھ میں تھا۔ یہی شخص ۵ دن تک امامت کے فرائض بھی انجام دیتا رہا۔ شر پسندوں کا یہ گروہ حضرت عثمانؓ کو شہید کر دینے تک تو متفق تھا لیکن آئندہ خلیفہ بنانے میں ان میں آپس میں اختلاف تھا۔ مصری حضرت علیؓ کو خلیفہ بنانے پر مصر تھے، کوفی حضرت زبیرؓ اور بصری حضرت طلحہؓ کو۔ لیکن ان تینوں حضرات نے انکار کر دیا۔ پھر یہ لوگ حضرت سعد بن ابی وقاصؓ کے پاس گئے اور کہا کہ آپ اہل شوریٰ سے ہیں زمامِ خلافت آپ سنبھال لیجیے۔ پھر حضرت عبد اللہ بن عمرؓ کے پاس جا کر یہی کچھ کہا۔ لیکن ان دونوں حضرات نے بھی صاف انکار کر دیا۔ (البدایہ ج۷، ص ۲۲۶)
اس صورتِ حال سے ان شورشیوں کو یہ خطرہ پیدا ہو گیا کہ اگر ہم اس معاملہ کو یونہی چھوڑ کر واپس چلے گئے تو ہماری خیر[2] نہیں۔ یہ سوچ کر حضرت علیؓ کے پاس آئے اور اصرار کیا اور اس گروہ کے سرخیل اشتر نخعی نے حضرت علیؓ کا ہاتھ پکڑ کر بیعت کر لی۔ اس کے بعد دیگر افراد نے بھی بیعت کی۔ (البدایہ ج ۷ ص ۲۳۶)
طبری کی روایت کے مطابق جب حضرت علیؓ سے زمام خلافت سنبھالنے کو کہا گیا تو آپ نے فرمایا:۔
’’میری بیعت خفیہ طریقے سے نہیں ہو سکتی۔ یہ مسلمانوں کی مرضی سے ہونی چاہئے۔‘‘ (طبری جلد ۴۔ ص ۴۲۷)
اور ابن قتیبہ کی روایت کے مطابق آپ نے اس کو یوں جواب دیا:۔
’’یہ اہلِ شوریٰ اور اہلِ بدر کا کام ہے جسے وہ منتخب کریں۔ وہی خلیفہ ہو گا۔ پس ہم جمع ہوں گے اور اس معاملہ پر غور کریں گے۔ (ابن قتیبہ۔ الامامۃ والسیاسۃ ج ۱ ص ۴۱)
لیکن ظاہر ہے کہ حضرت علیؓ کی خواہش کے مطابق اہل شوریٰ اور اہل بدر کے جمع ہونے کا موقع میسر نہ آسکا۔ اور اس کے بغیر ہی آپ خلیفہ چن لیے گئے۔ جیسا کہ دوسری روایات سے معلوم ہوتا ہے۔
حضرت علیؓ سے بیعت کرنے کے بعد اشتر نخعی اور اس کے ساتھی حضرت طلحہؓ کے پاس گئے اور کہا بیعت کیجیے۔ انہوں نے پوچھا: کس کی؟ کہنے لگے ’’علیؓ کی۔‘‘ طلحہؓ نے پوچھا کیا شوریٰ نے جمع ہو کر اس کا فیصلہ کیا ہے؟‘‘ انہوں نے اس کا کوئی جواب نہیں دیا اور کہنے لگے۔ ’’بس چل کر بیعت کیجیے۔‘‘ انہوں نے پھر انکار کیا لیکن وہ بجبر ان کو وہاں سے لے گئے۔ (الامۃ والسیاسۃ ج۱ ص ۴۲) اس واقعہ کی تائید میں طبری کی روایت بھی پیش کی جا چکی ہے۔
جیسا کہ حضرت علیؓ کے قول سے ظاہر ہے کہ انتخاب امیر اہلِ شوریٰ یا اہل بدر کا کام ہے جنہیں بالفاظ دیگر اہلِ حل و عقد یا اعیانِ ملّت بھی کہتے ہیں۔ چونکہ حضرت علیؓ کا انتخاب اہل شوریٰ کے بجائے عامیانہ دباؤ کے تحت ہوا تھا لہٰذا آپ کی خلافت کی آئینہ حیثیت بھی زیر بحث رہی۔ کئی مقامات پر بہت سے لوگ بیعتِ علیؓ سے کنارہ کش رہے۔ شام تو کلیۃً حضرت علیؓ کی بیعت سے کنارہ کش رہا۔ مدینے سے بھی بہت سے افراد بیعت علی سے بچنے کے لئے شام چلے گئے تھے۔ (طبری ج ۴ ص ۴۳۳۔ البدایہ ج ۷ ص ۲۳۶، الکامل ج ۴ ص ۱۹۲)
مصر، کوفہ اور بصرہ میں بھی ایک گروہ نے بیعتِ علی سے توقف کیا (ایضا)
خود مدینے میں بیسیوں لوگوں نے بیعت نہیں کی جن میں جلیل القدر اصحابِ رسول بھی تھے۔ علامہ ابن خلدون نے اپنے شہرٔ آفاق مقدمہ میں انتخابِ علی کی تفصیل یوں لکھی ہے۔ (مقدمہ ابن خلدون۔ فصل ولایت عہد ص ۳۷۸۔۳۷۹ طبع بیروت   ۱۹۶۱؁ء)
’’شہادت عثمان کے وقت لوگ مختلف شہروں میں پھیلے ہوئے تھے۔ سب حضرت علیؓ کی بیعت کے موقعہ پر حاضر نہ ہو سکے اور جو حاضر تھے ان میں سے بھی سب نے بیعت نہیں کی۔ بعض نے کی اور بعض نے اس وقت تک توقف کی روش اختیار کی جب تک لوگ ایک امام پر جمع نہ ہو جائیں (گویا) ان کی نظر میں خلافت علی خلفائے ثلاثہ کی طرح اجماعی نہ تھی۔ ان میں حضرت سعد، سعید، ابن عمر، اسامہ بن زید، مغیرہ بن شعبہ، عبد اللہ بن سلام، قدامہ بن مظعون، ابو سعید خدر، کعب بن مالک، نعمان بن بشیر، حسّان بن ثابت، زید بن ثابت، مسلمہ بن مخلّد، فضالہ بن عبید اور ان جیسے دیگر اکابر صحابہ ہیں جنہوں نے بیعت نہیں کی تھی۔ (البدایہ والنہایہ ج ۵ ص ۲۲۶)
جو لوگ مدینے سے باہر دوسرے شہروں میں تھے انہوں نے بھی بیعت کرنے سے اس وقت تک اعراض کیا جب تک خونِ عثمان کا مطالبہ پورا نہ ہو جائے اور جب تک مجلس شوریٰ خود کسی شخص کو خلیفہ منتخب نہ کرے۔ حضرت علیؓ کے متعلق یہ لوگ اگرچہ یہ خیال تو نہیں رکھتے تھے کہ وہ بھی خونِ عثمانؓ میں شریک ہیں تاہم قاتلین عثمان کے معاملہ میں ان کے سکوت کو انہوں نے ان کی کمزوری اور سستی پر محمول کیا۔ حضرت معاویہؓ بھی حضرت علیؓ کو جو کچھ کہتے تھے اس کی بنیاد بھی حضرت علیؓ کا یہی سکوت تھا۔
خلافت علیؓ جس طرح بھی منعقد ہوئی ہو گئی لیکن منعقد ہو جانے کے بعد بھی اتفاق کی صورت پیدا نہ ہو سکی۔ اختلاف موجود رہا۔ حضرت علیؓ کا خیال تھا کہ ان کی بیعت منعقد ہو گئی ہے اور مدینہ جو شہر رسولؓ اور مسکنِ صحابہؓ ہے۔ وہاں کے باشندے ان پر مجتمع ہو چکے ہیں۔ اس لئے بیعت سے پیچھے رہنے والوں کے لئے اب بیعت ضروری ہو گئی ہے لیکن اس کے ساتھ ہی مطالبہ قصاص کے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اسے اس وقت تک ملتوی رکھا جائے جب تک ایک کلمہ (خلافت) پر لوگوں کا اتفاق و اجتماع نہ ہو جائے کیونکہ اس کے بغیر وہ طاقت ممکن نہیں جو اس کام کے لئے ضروری ہے۔
دوسرے حضرات کا یہ خیال تھا کہ جو صحابہ اہل حل و عقد ہیں وہ بیعتِ علیؓ کے وقت مدینہ میں نہ تھے یا ان کی تعداد قلیل تھی، وہ اس وقت دیگر شہروں میں متفرق تھے۔ ان کے بغیر یا ان کی قلیل تعداد کے ساتھ بیعت منعقد نہیں ہو سکتی، اس لئے بیعت ہی سرے سے منعقد نہیں ہوئی۔ مسلمان لمحۂ انتشار میں ہیں۔ اس بنا پر ان کا کہنا یہ تھا کہ پہلے خون عثمان کا مطالبہ پورا کیا جائے۔ اجتماع علی الامام کا معاملہ دوسرے نمبر پر ہے۔ اس نقطۂ نظر کے لوگوں میں حضرت معاوہیؓ، عمرو بن العاصؓ، ام المومنین حضرت عائشہؓ، حضرت زبیرؓ، ان کے صاحبزادے حضرت عبد اللہؓ اور حضرت طلحہؓ اور ان کے صاحبزادے محمدؓ، حضرت سعدؓ، حضرت سعیدؓ نعمان بن بشیرؓ، معاویہ بن خدیج اور ان کے علاوہ ان کے ہم رائے وہ اکابر صحابہ تھے جو مدینے میں بیعت علیؓ سے پیچھے رہے تھے۔‘‘
حضرت علیؓ کی خلافت کی اس حیثیت کا احساس خود ان حضرات کو بھی تھا جو حضرت علیؓ کے قریب ترین رشتہ دار اور مصاحب تھے۔ جیسے حضرت عبد اللہ بن عباس، انہوں نے حضرت علیؓ کو جب یہ مشورہ دیا کہ فی الحال حضرت عثمانؓ کے مقرر کردہ عاملین کو معزول نہ کیا جائے۔ اس وقت انہوں نے ایک وجہ یہ بھی بیان کی کہ ’’اگر ان کو اس وقت معزول کر دیا گیا تو ممکن ہے کہ وہ آپ کی خلافت ہی کو چیلنج کر دیں اور کہیں کہ یہ خلافت ہی شوریٰ کے بغیر حاصل ہوئی ہے۔‘‘ (طبری ج ۴ ص ۴۳۹) (الکامل ج ۳ ص ۱۹۷)
جنگ صفین کے دوران جب وفد کے ذریعہ صلح کی بات چیت شروع ہوئی تو حضرت معاویہؓ کے وفد نے اس وقت بھی اس بات کو حضرت علیؓ کے سامنے دہرایا تھا کہ آپ امر خلافت کو چھوڑ کر اسے شوریٰ کے حوالے کر دیں تاکہ لوگ اپنی مرضی سے جسے چاہیں خلیفہ منتخب کریں۔ (طبری جلد ۵ ص ۷۳۷، الکامل جلد ۳ ص ۳۹۱)
ما حصل:۔ حضرت علیؓ کو نہ تو اہلِ شوریٰ نے منتخب کیا۔ نہ مسلمانوں کی آزادانہ رائے کا اس سے کوئی تعلق تھا۔ یہ انتخاب ہنگامی حالات میں ہوا اور منتخب کرنے والا وہی باغی اور شورش پسند گروہ تھا جس کا دامن خونِ عثمان کے چھینٹوں سے داغ دار تھا۔ تاہم یہ خلافت منعقد ہو گئی اور اسی طرح برحق ہے جیسے پہلے تین خلفاء کی برحق ہے۔ اگر جملہ اہلِ شوریٰ کو آزادانہ ماحول میسر آتا تو بھی حضرت علیؓ کے انتخاب کا غالب امکان تھا۔ جیسا کہ حضرت عثمانؓ کی خلافت کے تقرر کے واقعہ سے واضح ہوتا ہے۔

[1]  ان شر پسندوں اور غنڈوں کا طرز تخاطب ملاحظہ فرمائیے۔ نیز یہ بھی کہ کس صورت حال میں حضرت علیؓ خلیفہ منتخب ہوئے۔
[2]  خود عبد اللہ بن سبا مصر سے بھیس بدل کر مدینہ آیا اور اپنے چیلوں کو تاکید کی خلیفہ کے تقرر کے بغیر اپنے علاقوں کو ہرگز واپس نہ جائیں۔