تو ذوالجلال ہے تو خدائے قدیر ہے               یکتا ہے ، لا شریک و علیم و بصیر ہے
تو صیف لکھ رہا ہوں تیرے کمال کی              طاری دل و دماغ پہ کیف صریر ہے
گرداب حاثات میں گھر  کر بھی اے خدا      دل ہے کہ تیرے ذکر سے راحت پذیر ہے
شاہ دو زیر منعم و محکوم و حکمراں                    جو شخص بھی ہے تیرے ہی در کا فقیر ہے
حاوی ہے تیرا علم قریب و بعید پر !                تو اعلم الغیوب و سمیع و بصیرہے
حاصل ہو جس کو تیری محبت کی روشنی          دراصل آدمی وہی روشن ضمیر ہے
راسخ ، کرم  ہے اس کا شمیم بہار خلد !
اسکا عتاب شعلۂ نار سعید ہے