کیا آمد بہار ہے غم خوار کچھ نہ پوچھ گلش میں ہیں بہار کے آثار کچھ نہ پوچھ
کس اوج پر ہے طالع بیدارکچھ نہ پوچھ مشرق ہے آج مطلع انوار کچھ نہ پوچھ
احیائے دین نوید بہاراں ہے اِن دنوں دامانہ گلفروش ہے ہر خار کچھ نہ پوچھ
تاریکی ضمیر مقدر تھی قوم کا ہر دل ہے مصدرِ انور کچھ نہ پوچھ
اسلام اپنے دل کی مرادوں کی تھی بہار اب آمدِبہار کے آثار کچھ نہ پوچھ
یادِ خدا ہے ہر دل میں روشن اِن دنوں تسبیح خواں ہے ہر درودیوار کچھ نہ پوچھ
ہے ان دنوں تلاش تقدس کی ہر طرف خیر محض کی گرمی بازار کچھ نہ پوچھ
تاریکیوں کو مغربی تہذیب کی شکست مشرق نے دی ہے کس طرح اسرار کچھ نہ پوچھ