فضا دلکش ہے کیف آور سماں ہے          جبیں میری ہے تیرا آستاں ہے
زمیں کے ذرے گردوں کے ستارے             ہر اک شے سے تری قدرت عیاں ہے
نہیں موقوف نجم و مہر و ماہ پر             ترے قبضے میں نظم دو جہاں ہے
یہ کس نے بربطِ دِل آج چھیڑا              کہ ہر تارِ نفس نغمہ کناں ہے
گئے جس راہ سے اپنے اکابر                    وہی رہ اپنی منزل کا نشاں ہے
نہیں ممکن فرار اس ذات حق سے              زمیں اس کی ہے اس کا آسماں ہے
میں اپنی بے بسی پر رو رہا ہوں             رواں سوئے مدینہ کارواں ہے
غلط باتیں نہ کر منسوب ہم سے                ہمارے منہ میں بھی آخر زباں ہے
یہ ممکن ہے وہی دشمن ہو تیرا                زمانے میں جو تیرا رازداں ہے
کوئی پگھلا بھی دِل تیرے بیاں سے                سُنا تھا تو بڑا شعلہ بیاں ہے
ترا عاجزؔ ترے لطف و کرم سے              تری تعریف میں رطب اللّساں ہے