دل کو سکوں ملا نہ سکوتِ زباں سے بھی          آساں ہوئیں نہ مشکلیں آہ و فغاں سے بھی
بھڑکی جو آگ دل میں ترے اشتیاق کی           وہ بجھ سکی نہ پھر کسی اشکِ رواں سے بھی
لیتی ہے آنکھ لطفِ کمال و جمالِ دوست         شادابیٔ چمن سے بھی دورِ خزاں سے بھی
اعجاز ہے انہیں کے یہ حسن و جمال کا           محبوب ہو گئے وہ مجھے میری جاں سے بھی
لے چل دِل حزیں وہیں لے چل دلِ خریں        تکمیل پا سکے غمِ ہستی جہاں سے بھی
یلغار تیغ کی ہو کہ خطرہ ہو جان کا!            لائیں گے ہم روائے محبت وہاں سے بھی
نازاں ہیں لوگ دعویٔ تسخیر ماہ پر         آگے گئے ہمارے نبی آسماں سے بھی
وہ کام کر گئی ہے تری تیزیٔ زباں            جو ہو سکا نہ خنجر و تیغ و سناں سے بھی
ماحول کا اثر بھی ہے اور اے خطیبِ قوم           بگڑی ہے قوم کچھ ترے طرزِ بیاں سے بھی
مسجد سے بھی لگاؤ ہے فلموں سے بھی ہے عشق          آگاہ ہم نہیں رہے سود و زیاں سے بھی!
تو دیکھ میرا گلشنِ دل پھونک کر ذرا            شعلے بلند ہوں گے ترے آشیاں سے بھی
لوٹا ہوں نامراد ہر اِ ک بارگاہ سے           کیا نا اُمید جاؤں تیرے آستاں سے بھی
دستِ دعا اُٹھا نہ کوئی آنکھ نم ہوئی            ہم نے گزر کے دیکھ لیا اپنی جاں سے بھی
مانا کشادہ چشم تھے غُنچے ترے لئے           رکھنا تھا ربط اس دلِ حسرت نشاں سے بھی
اس سے نہ چھپ سکینگی سیاہ کاریاں تِری           واقف ہے وہ تو دل کے خیالِ نہاں سے بھی
صد حیف تجھ پہ اے دلِ عاجزؔ ہزار حیف
تجھ کو سبق ملا نہ غمِ ناگہاں سے بھی!