فہرست مضامین

میرے پسندیدہ۔۔

اس صفحہ کو پسند کرنے کے لیے لاگ ان کریں۔
Powered By JFBConnect

دیا اپنے غلاموں کو شکوہِ قیصری تُو نے       کیا شاہوں کو آگاہِ مقامِ بندگی تُو نے
سکھائے تُو نے محکوموں کو آداب جہانبانی       مرے آقا ﷺ بدل ڈالا مزاج خسروی تُو نے
تو آیا باغِ عالم کے لئے ابرِ کرم بن کر      چمن زارِ محبت کو عطا کی تازگیُو نے
زمانے بھر میں چرچا ہے تری دریانوالی کا      وہ نعمت کون سی ہے جو زمانے کو نہ دی تُو نے
تُو اُترا روح کی گہرائیوں میں نورِ جاں بن کر      سیہ کاروں کو دی کردار کی تابندگی تُو نے
تری ذاتِ گرامی مصدرِ اخلاق و احساں ہے     کہ اپنے دشمنوں پر بھی نگاہِ لُطف کی تُو نے
تو ختم المرسلین ﷺ ہے، رحمۃٌ للعالمین ﷺ بھی ہے      دیا انساں کو فطرت کا پیامِ آخری تُو نے
تو آیا ظلمتِ شب میں پیام صبح نو لے کر       افق سے تا افق پھیلائی حق کی روشنی تُو نے
گدائی تیرے در کی فِرّ سلطانی سے بہتر ہے       کہ اپنے نام لیواؤں کو دی ہر برتری تُو نے
ہے تو خیر البشر ﷺ، تو لاج ہے تقویم احسن کی      بڑھائی اپنی ضَو سے آب و تابِ زندگی تو نے
بھٹکتے پھر رہے تھے جو ظلامِ کفر و باطل      عطا ان کو کیا وحدت کا نورِ سرمدی تُو نے
ہو اپنے طاہرؔ محزوں پہ اب چشمِ کرم یا رب
ہمیشہ کی ہے اہلِ درد کی چارہ گری تو نے