فہرست مضامین

میرے پسندیدہ۔۔

اس صفحہ کو پسند کرنے کے لیے لاگ ان کریں۔

 
غلامِ محمد ﷺ کا رتبہ بڑا ہے                ہر اورنگ زیب اس کے در کا گدا ہے
یہ گرد و غبارِ گزر گاہِ بطحا              یہ کُحلِ جواہر ہے خاکِ شفا ہے
یہاں کا ہر اک ذرہ ہے سنگِ پارس            مہوس! یہ مٹی نہیں کیمیا ہے
ہیں جارُوب کش اس جگہ کے فرشتے             یہ آرامگاہِ شرِ انبیا ہے
وہ تعبیر خوابِ خداوند بیچوں             وہ نقشِ ہیولائے ارض و سما ہے
جو پچھلے پہر کالی کملی میں لپٹا            تہِ چرخِ دوّار محوِ دُعا ہے
محبت ہے گو اس کی وشبو وزن سے               مگر ٹھنڈک آنکھوں کی ذکرِ خدا ہے
بشر کو ملا ہے، رسالت کا رتبہ             وہ ہم میں سے ہے، ہم سے لیکن جدا ہے
یہ اَسماؔ ہے ذات النِّطاقین دیکھو           یہ سارا گھرانہ ہی اس پر فدا ہے
بجاتے ہیں دَف زہرہ چشمانِ یثربؔ                  مدینےؔ میں ماہِ تمام آگیا ہے
مکیں یاد آئے مجھے ذی سلم کے            جگر کا لہو آنسوؤں میں ملا ہے
ہر اک شے ہے آساں مگر ذکرِ خوباں            بیانِ جفا ہے حدیثِ وفا ہے
کہاں ہو سکی عشق کی پردہ داری             برستا ہے پانی دھواں اُٹھ رہا ہے
بسی ہے فضاؤں میں خوشبوئے رفتہ              کفِ دستِ صحرا پہ رنگِ حنا ہے
سُراقہؔ کے ہاتھوں میں کُسریٰؔ کے کنگن             عمرؓ پیش گوئی پہ سر دُھن رہا ہے
فراشِ محمد ﷺ پہ مشرک نہ بیٹھے               یہ اُمِ حبیبہ نے کس سے کہا ہے؟
کسے وصلہ اس کی نعت و ثنا کا                 امامِ رسل ہے امینِ خدا ہے
صدا نَحْنُ اَقْرَبْ کی آتی ہے پیہم               یہ ڈھرکن ہے دل کی کہ بانگِ درا ہے
صبا گُد گُداتی ہے جب تک گُلوں کو              لبِ سارباں پر نشید و حُدا ہے
تری رحمت اس کی کرے دستگیری            دلِ خالدؔ آماجِ رنج و بلاء ہے
پریشان و مخزون و خاموش و حیراں           صنم آشنا، رہنِ خوف و رجا ہے
رہے ذکر سے عمر معمور اس کی             کہ خواب و خورش اس کا حرف و نوا ہے
عوض سے معرّا غرض سے مبرّا            سخن ور ہے لوح و قلم مانگتا ہے
یکے جرعہ دریا! یکے قطرہ باراں!
ہے لبہ تشنہ، جویائے آبِ بقا ہے!