دلِ حزیں پہ گزرتی ہے کیا یہ بات نہ پوچھ        تو حالِ زار مرا دیکھ، واقعات نہ پوچھ
نگاہِ غور سے اس حشرِ کائنات کو دیکھ         وجودِ باری پہ آیات بیّنات نہ پوچھ
بس ایک جلوے سے بیہوش ہو گئے موسیٰ        خدا کے نورِ مبیں کی تجلّیات نہ پوچھ
مثالِ برف کبھی کا پگھل چکا ہے شبا        ہیں اب بھی دل میں مرے کتنی خواہشات نہ پوچھ
بشر وہی ہے کہ ہے جس کے دل میں خوفِ خدا       تو پوچھ نام نہ اس کا تو اس کی ذات نہ پوچھ
قدم قدم پہ خطا تھی، نفس نفس میں گناہ      بڑھاپے میں تو جوانی کے حادثات نہ پوچھ
ہے نزع و قبر و قیامت کا سامنا جن کو      مرے عزیز تو ان کے تفکرات نہ پوچھ
ابھی تو منزلِ مقصود ہے بہت آگے       ابھی سے راہِ محبت کی مشکلات نہ پوچھ
خدا کا شکر ہے جس حال میں ہوں اچھا ہوں     گزر رہی ہے یہ کس رنگ سے حیات نہ پوچھ
زباں پہ دعوٰے توحید ہے مگر افسوس      دلوں میں کتنے نہاں ہیں توہمات نہ پوچھ
مریضِ عشق ہوں میں تو' اسیرِ حرص و ہوس       تو اپنی بات نہ کر، میرے واردات نہ پوچھ
جوارِ کعبہ میسر رہا ہے بارہ برس!       خدائے پاک کی مجھ پہ نوازشات نہ پوچھ
زباں پہ آ نہیں سکتا وہاں جو دیکھا ہے         تو اس فضائے حسیں کے مشاہدات نہ پوچھ
سیاہ کار ہے عاجزؔ جہاں سے بد تر ہے       تو دیکھ اپنا کرم، اس کے سیّأت نہ پوچھ