ہر شے سے حسین صورتِ سردارِ مدینہ      قرآنِ مبین صورتِ سرکارِ مدینہ
فردوسِ زمیں خطۂ گلزارِ مدینہ      ہیں درجِ ثمیں کوچہ و بازارِ مدینہ
اللہ رے یہ حسن، یہ شان یہ سج دھج      گوہر ہیں کہ بام و درو دیوارِ مدینہ
سامان ہیں دلبستگیٔ قلب و نظر کا       وہ وادیاں، وہ کھیت، وہ آبارِ مدینہ
اللہ کے نشانات فرشتوں کے مقامات     وہ دشت، وہ باغات، وہ کہسارِ مدینہ
ہر صبح عنبر ہے تو ہر شام معطر!     یہ گلشنِ جنت ہے؟ کہ گلزارِ مدینہ
صدلالہ در آغوش ہے خارِ رہ بطحا      ہے شمع سرطور شبِ تارِ مدینہ
ہر اہل نظر کے لئے آنکھوں کی طراوت    سر سبز کھجوروں کے وہ اشجارِ مدینہ
پھر دُھلنے لگی دل سے گناہوں کی سیاہی      اللہ رے یہ بارشِ انوارِ مدینہ
اربابِ مدینہ کے وہ ہنستے ہوئے چہرے        چہرے کہ گل و لالۂ گلزارِ مدینہ
سنگریزے جو یہ مسجدِ نبوی میں پڑے ہیں        لگتے ہیں ہمیں تو دُرِ شہوارِ مدینہ
یہ بات عقیدت کی ہے عاجزؔ سے نہ پوچھیں
کیفیتِ شیرینیٔ اثمارِ مدینہ