اللہ کا جو تابعِ فرماں نہیں ہوتا      انسان حقیقت میں وہ انساں نہیں ہوتا
بے کیف ہے یہ جلوہ گرِ حسن و محبت       پروانہ اگر شمع پہ قربان نہیں ہوتا
مومن کسی انساں کو پریشان نہیں کرتا      مومن کسی انساں سے پریشاں نہیں ہوتا
لٹتے ہیں سدا عزت و ناموس اسی کے      آپ اپنی جو عزت کا نگہباں نہیں ہوتا
پیغمبرِ بر حق ﷺ کی احادیث کا منکر     واللہ! کبھی صاحبِ ایماں نہیں ہوتا
انجامِ گلِ تر سے جو واقف ہے چمن میں      وہ دل کبھی مانوسِ بہاراں نہیں ہوتا
اس شب مہ و انجم بھی چراغاں نہیں کرتے      جس شب مِری پلکوں پہ چراغاں نہیں ہوتا
عاجزؔ کبھی ایمان کی تکمیل نہ ہو گی
جب کہ رہِ حق میں تو قرباں نہیں ہوتا