اس نظم میں یہ التزام کیا گیا ہے کہ ہر شعر میں لفظ ''غم'' ضرور آئے۔
آنکھ پُر نم ہے غمِ فرقت سے دل رنجور ہے       داستانِ غم سنا نے پر زباں مجبور ہے
جب کوئی ساتھی نہیں ہوتا تو غم دیتا ہے ساتھ      غم حقیقت میں رفیقِ ہر دلِ مہجور ہے
غم نہ کر کوئی نہیں تیرا یہاں گر غم گسار        یہ جہانِ غم ہے، غم سے یہ جہاں معمور ہے
اس جہانِ غم میں مثلِ لالۂ خونیں کفن       دل مرا ہنستے ہوئے بھی کس قدر رنجور ہے
ایک جاں ہے جو ہزاروں غم سے ہے آتشِ بجاں       ایک دل ہے سینکڑوں فکروں میں جو محصور ہے
دوستو! ہم کس لئے سعیِ نجاتِ غم کریں        غم سے جب لذت کشِ راحت و دل مجبور ہے
ہو غمِ دورِ فلک، یا ہو غمِ جورِ حبیب       عاشقِ جانباز تو ہر حال میں مسرور ہے
غم نہ کر اے کشتۂ دار و رسن کچھ غم نہ کر!       سرخیٔ رودادِ غم خونِ دلِ منصور ہے
بحرِ غم میں ڈوب کر ہم پر یہ روشن ہو گیا       ظلمتِ یاس و الم میں غم چراغِ طور ہے
فکر و حسرت، یاس و حرماں، سوز و غم، رنج و ملال      اس شرابِ ناب سے ہر جامِ دل معمور ہے
ہے مالِ راحتِ دنیا، غم و رنج و ملال       اور غم عقبٰے میں عیشِ جاوداں مستور ہے
آخرت کا غم، غمِ دنیا کا ہے کامل علاج         آیتِ حق ہے یہ جو قرآن میں مذکور ہے
کیا نہیں عاجزؔ تجھے کچھ بھی غمِ روزِ حساب
چند روزہ زندگی پر کس قدر مغرور ہے