ہر ایک ذکر سے ذکرِ خدا معظم ہے           ہر ایک فکر سے فکرِ عدم مقدم ہے
ترے مریض کی یہ بے بضاعتی، توبہ                 نہ دل میں خون کا قطرہ، نہ آنکھ میں نم ہے
ترا ہی ذکر ہے وجہ سکون قلب و نظر            تری ہی یاد مرے زخم دل کا مرہم ہے
وہی ہے حبّ محمد میں کامل و صادق          ہر ایک حکمِ محمد پہ جس کا سر خم ہے
قرار کیسے ہو دل کو جب اس کا علم نہیں          مرے نصیب میں جنت ہے یا جہنم ہے
کھڑی ہے سر پہ اجل زندگی ہے پایہ رکاب        نہ کوئی رختِ سفر ہے نہ کوئی ہمدم ہے
گزر گیا ہے، لڑکپن، شباب ختم ہوا               مالِ زندگی اب تک بھی تجھ پہ مبہم ہے؟
عجیب منظرِ باغِ جہاں ہے اے عاجزؔ
ہر ایک سینۂِ گل میں مزار شبنم ہے!