فہرست مضامین

میرے پسندیدہ۔۔

اس صفحہ کو پسند کرنے کے لیے لاگ ان کریں۔
Powered By JFBConnect

ترے خیال کو دل میں بسا کے لایا ہوں میں ایک ذرّے میں صحرا چھپا کے لایا ہوں
ترے کرم کی نہایت ہے یہ کہ تیرے حضورؐ میں اپنے آپ کو خود سے بچا کے لایا ہوں
میں دیکھتا تھا کبھی جس میں اپنی ذات کا عکس اس آئینہ کی میں کِرچیں اُٹھا کے لایا ہوں
یہ جاں کہ تجھ کو زمانے کا روپ کہتی ہے میں قیدِ وقت سے اس کو چھڑا کے لایا ہوں
نظر کا سوز، تمنّا کی آنچ، غم کی جلن میں خود کو سردِ چراغاں بنا کے لایاں ہوں
کہاں ہے تیرگیٔ خاکدان کہ میں امشب فلک سے تیری تجلّی اُٹھا کے لایاں ہوں
جلا مجھے کہ مہک اُٹھوں اے چراغِ حرم
میں اپنے جسم کو صندل بنا کے لایا ہوں!