نجومِ شب کو جگائو کہ روشنی کم ہے      شرر شرر کو بتاؤ کہ روشنی کم ہے
کوئی بھی بزم میں پہچانتا نہیں ہم کو     فروغِ ربط بڑھاؤ کہ روشنی کم ہے
ابھی لہو کے چراغوں پہ اکتفا کر لو            ابھی زبان پہ نہ لاؤ کہ روشنی کم ہے
سرشکِ خوں کے ستارے بھی پڑ گئے مدھم       وفا کی شمع جلاؤ کہ روشنی کم ہے
ترس رہی ہیں نگاہیں کرن کرن کے لئے        دلوں میں آگ لگاؤ کہ روشنی کم ہے
لرز رہے ہیں جو سائے پر سے نگاہوں سے        قریب لا کے دکھاؤ کہ روشنی کم ہے
نمودِ صبح درخشاں سے پیشتر راسخؔ
قدم سنبھل کے اُٹھاؤ کہ روشنی کم ہے