• مئی
  • جون
1973
حفیظ تائب
نغمہ زا سازِ ثنا پاتا ہوں     وجد میں ارض و سما پاتا ہوں
معنیٔ لفظ و بیاں آتے ہیں     ہم نوا روحِ نوا پاتا ہوں
والئی کشورِ جاں آتے ہیں    سرِ تسلیم جھکا پاتا ہوں