• جولائی
1971
غلام احمد حریری
صدر محترم و سامعین عظام!

آپ نے سرورِ کائنات ﷺ کی سیرت طیبہ کے مختلف پہلوؤں پر متعدد تقاریر و مقالات سنے۔ آنحضورﷺ کی سیرت طیبہ وہ بحر ناپیداکنار ہے، جس کی شناوری حیطۂ بشری سے خارج ہے، استطاعت انسانی کی حد تک مدح و توصیف کے بعد بھی یہی کہنا پڑے گا کہ:
  • ستمبر
1983
غلام احمد حریری
اسم مبارک عبدالقادر، کنیت ابومحمد او رلقب محئ الدین تھا۔متاخرین نے فرط عقیدت سے متعدد القاب کا اضافہ کردیا۔ ولادت باسعادت 470ھ مطابق 78۔1077ء او روفات 10 ربیع الاوّل 561ھ مطابق 11۔ اپریل 1166ء کو ہوئی۔ سیادت نسبی دونوں طرف سے حاصل تھی۔ والد ماجد کی طرف سے آپ حسنی اور والدہ ماجدہ کی طرف سے حسینی تھے، سایہ پدری بچپن ہی میں سراُٹھ گیا تھا۔ ابتدائی زندگی کے حالات بہت کم معلوم 
  • ستمبر
1976
غلام احمد حریری
ظہورِ اسلام سے پہلے زندگی کا تصّور محدود تھا۔اسلام کی آمد سے ایک نئے دَور کا آغاز ہوا۔ خیالات و افکار میں انقلاب آیا۔قرآن کے آفاقی تصّور نے زندگی کے افق کووسیع کردیا۔ اس انقلاب سے ہر شعبہ حیات متاثر ہوا۔ قرآن کے زیر اثر علم و فن کے بہت سےنئے زاویے بنے۔شعر و ادب اور زبان پر بھی قرآن کے خوشگوار اثرات پڑے۔ قرآن مجید نے ادب میں حریت فکر، وسعت نظر، پاکیزگی تخیل او ربلندئ معنی کے اوصاف پید کیے۔
  • جنوری
  • فروری
1974
غلام احمد حریری
27۔ اکتوبر سال رواں علامہ عبدالعزیز میمن بھی عازم فردوس ہوگئے۔ اخبارات نے سخت بے اعتنائی برتی۔ آپ کے سانحہ ارتحال کی خبر چند سطروں میں او رایسے غیر معروف گوشہ میں دی جس کو اخبار بین عام طور پر نظر انداز کرجاتے ہیں۔ تعلیمی اداروں نے تو او ربھی سہل انگاری کا ثبوت دیا۔ جامعہ پنجاب او رکراچی کے شعبہ ہائے عربی کے آپ کئی سال سربراہ رہے مگر کسی نے تعزیت میں ایک فقرہ بھی نہ کہا۔
  • نومبر
1981
غلام احمد حریری
دین اسلام میں تعلیم کی اہمیت مسلّم ہے۔ تاریخ انسانیت میں یہ منفرد مقام اسلام ہی کو حاصل ہے کہ وہ سراسر علم بن کر آیا اور تعلیمی دُنیا میں ایک ہمہ گیر انقلاب کا پیامبر ثابت ہوا اسلامی نقطۂ نظر سے انسانیت نے اپنے سفر کا آغاز تاریکی اور جہالت سے نہیں بلکہ علم اور روشنی سے کیا ہے۔ تخلیقِ آدم کے بعد خالق نے انسانِ اول کو سب سے پہلے جس چیز سے سرفراز فرمایا وہ علمِ اشیاء تھا۔ یہ اشیاء کا علم ہی ہے جس نے انسانِ اول کو