• جولائی
1996
ڈاکٹر حبیب الرحمن کیلانی
اشک خون روتا ہے دل ہے آنکھ سے سیل رواں      موجزن ہے دل میں غم کا بحربیکراں 
کا تب قرآن بھی تھے اور دین کے عالم نامور    چودھویں کے چاند جیسی کتب تیری راہ پر
پرخلوص بے تعلق بے ریا و بے غرض تیری حیا ت    پا کباز و پاک طینت اور پابند صلوٰت
پاک فطرتپاک دامن نیک سیرت نیک خو  زند گی ایک سعی پہیم ایک مسلسل آرزو
خوش مزاج و خوش فعال وکوش نہاد و خوش نصیب   نیک بخت و نیک نام و نیک خو جان حبیب 
گفتگوتھی دل پذیر اور دل نشین تحریر تھی   تھی شگفتہ بات بھی اور دلربا تقریر بھی 
جسم اتنا ناتواں اوزعلم اتنا ذی وقار    آپ کی ہستی تھی گو یا ہو گلستا ن میں بہار
علم دین نے تجھ کو بخشی اس قدر تاب و تواں    اک پر کاہ بن گیا تیرے کوہ گراں