• ستمبر
1985
فضل روپڑی
ہر بات میں ہے بے بس مجبور آدمی ۔ حیران ہوں پھر ہے کس لئے مغرور آدمی
دولت کے نشے میں جو ہوا چور آدمی۔       انسانیت سے ہے وہ بہت دور آدمی
پابند یہ نہیں ہے کسی بھی اصول کا۔        رکھتا نہیں ہے کوئی بھی دستور آدمی
  • اپریل
1992
عبدالرحمن عاجز
اگر صبر وقناعت ہے                                                     توراحت ہی راحت ہے

تکبر کا مال اکثر                                                             لڑائی ہے عداوت ہے

ہزاروں رنج جلوت کا                                                مداوا کنج خلوت ہے
  • اکتوبر
1990
عبدالرحمن عاجز
سینے میں اگر دل ترا تاریک نہیں ہے      پھر نکتہ کوئی نکتہ باریک نہیں ہے
گر مشورہ لینا ہے تو لے ٹھیک کسی سے        ہاں مشوہ بد پر عمل ٹھیک نہیں ہے
گرعزم ہے پختہ تو پہنچ جائے گا آخر   یہ مانا       کہ منزل تیری نزدیک نہیں ہے
  • ستمبر
1985
عبدالرحمن عاجز
بنت ملت کو نہ بے پردہ پھرائے کوئی                       دین اسلام پرچرکا نہ لگائے کوئی
خود جو پھرتی ہو نقاب اپنا اٹھائے کوئی             اس کوفتنوں سے بھلا کیسے بچائے کوئی
لاتبرجن سے واضح ہے مقام پردہ                   رسم فرسودہ نہ پروے کو بتائے کوئی
  • جنوری
1989
عبدالرحمن عاجز
خوش بخت نہیں کوئی مسلماں سے زیادہ
میں روؤں نہ کس طرح ہر انساں سے زیادہ
ہیں کس کی خطائیں میرے عصیاں سے زیادہ
تو کون و بیاباں میں جسے ڈھونڈ رہا ہے
نزدیک ہے وہ تیری رگِ جاں سے زیادہ
ہیں سیدِ کونین بھی انسان ہی لیکن
اشرف ہیں معزز ہیں ہر انساں سے زیادہ
سیرت میں تھے ممتاز ہر اک سے میرے آقا
صورت میں حسیں ماہِ درخشاں سے زیادہ
  • مارچ
1980
عبدالرحمن عاجز
معدن حسن ہے سر چشمہ ہے رعنائی کا 
ہر دل مردہ کو جینے کا سلیقہ آیا ،
ڈرے ذرے کی جبیں سے مہ و انجم ٹوٹے 
جس کی رنگت کو قیام اور نہ خوشبو کو دوام 
رات دن پر دہ ٔ سمیں پہ ستارے دیکھوں 
دور حاضر میں اسے کہتی ہے دنیا فن کار 
اک مسلمان مسلمان ہی سے خائف ہو 
اہل بینش بھی ہر اک اندھے کو بینا سمجھے
  • جنوری
  • فروری
1980
عبدالرحمن عاجز
اس چیز کی خواہش جو مقدر میں نہیں ہے 
جب کتبہ تقدیر پہ ایماں ہے یقیں ہے 
ہر شے میں جھلکتا ہے ترا چہرہ ٔ روشن 
ہر غنچہ رنگیں ہے ترے حسن کا مظہر 
ملتی ہے یہیں سے مہ داختر کو بلندی 
ہے جس پہ عمل راحت و عظمت کی ضمانت 
چلتا تھا زمیں  پر جو کبھی ناز دادا سے !
اس عمر کے دو ساتھی ہیں راحت بھی الم بھی 
ہشیار و خبر دار سنھبل  کر اسے چھونا !
  • اپریل
1992
عبدالرحمن عاجز
عبادت اک تجارت ہے                                 منافع جس کا جنت ہے
جنون خدمت انسان                                 شعورآدمیت ہے
بدی خوش رنگ ہے بے حد                           مگر اس میں ہلاکت ہے
  • جنوری
  • فروری
1980
اسرار احمد سہاروی
حسن كی جلوه نمائی ہو تو دیوانے بہت !!
درد کے گرقدرداں آئیں نظر کے سامنے 
قیس پر کیا منخصر ہے کوہکن ہے کیا ضرور 
دل کی ویرانی کا قصہ مختصر یہ ہے کہ آج !!
وہ رہے نا آشنا ئے غم اگر چہ ہر طرف 
شوق کو مہمیز کیجئے  بیدلی ہے سدراہ 
بیدلی ہائے تمنا  کا برا ہو ان دنوں 
ایک عالم پر ہجوم یاس ہے چھا یا ہوا
  • اپریل
1985
اسرار احمد سہاروی
مجھ کو دیوانہ بنا کر خوب رسوا کیجیے               غنچہ و گل میں سما کر مجھ سے پردہ کیجیے
شومئی قسمت کا اپنی یوں مداوا کیجیے             حسن یکتا کو دلوں میں بھلوہ فرما کیحیے
خود ہی ہو جائیں گے وہ محو تماشائے جنوں    دل میں ذوق جستجو کا حسن پیدا کیجیے
  • مئی
1985
فضل روپڑی
ہے زباں پہ میری جاری تری حمد کاترانہ
میرا شوق والہانہ میرا عشق غائبانہ
تجھے یاد کرتے کرتے ہے گزر گیا زمانہ
ہے زباں پہ میری جاری تری حمد کا ترانہ
مری مغفرت کا شاید یہ بن سکے بہانہ
ہوں سیاہ کار بیحد میرا دل دھڑک رہا ہے
کہیں رائیگاں نہ جائے میری محنت شبانہ
نہیں کرسکتا تلافی میں گزشتہ لغزشوں کی
  • ستمبر
1982
عبدالرحمن عاجز
مرقد پہ اُن کےآج کوئی نوحہ خواں نہیں !
اے صانع ِ ازل تری صنعت کہاں نہیں !       ہےکونسا جہاں تراجلوہ جہاں نہیں
یہ اضطرابِ شوق یہ رعب جمال دوست            میری زباں بھی آج مری ترجمان نہیں
سوز ِ غم فراقِ مسلسل کےباوجود                                                                                                                                                                           آنگھوں میں کوئی اشک ،زباں پرنغاں نہیں
  • اپریل
1980
اسرار احمد سہاروی
ہشیار ہو غاف کہ بجا ہے طبل جنگ               نغمے کی صدا تیز ہو ،لے ہو بلند آہنگ
جھنکار سلاسل کی صدا دیتی ہے ہر دم            جینا ہے غلامی کا تجھے موت کا ہمرنگ
صیقل ہے ضروری تیرو تیغ کی ہردم               فرمان نبی ﷺ ہے کہ نہ کھا جائے  انھیں رنگ
اٹھ تجھ کو بلاتی ہے صدا آ ہ وفغان کی             خون شہدا سے کمر و کوہ ہے اثررنگ
  • جون
1980
اسرار احمد سہاروی
بکھری ہوئی ہیں ان کی ادائیں کہاں کہاں

دامن کو دل کے ان سے بچائیں کہاں کہاں

جلوے قدم قدم ہیں تمہارے بہ ہر نگاہ

آنکھوں کو فرش راہ بنائیں کہاں کہاں

ہیں امتحان میں اپنی وفاداریاں ہنوز

داغوں سے اپنے دل کو سجائیں کہاں کہاں
  • اگست
2000
ماہر القادری
طاقوں میں سجایا جاتا ہوں ، آنکھوں سے لگایا جاتا ہوں
تعویذ بنایا جاتا ہوں ، دھودھو کے پلایا جاتا ہوں
جزدان حریر وریشم کے ، اور پھول ستارے چاندی کے
پھر عطر کی بارش ہوتی ہے ، خوشبو میں بسایا جاتا ہوں
جس طرح سے طوطے مینا کو ، کچھ بول سکھاے جاتے ہیں
اس طرح پڑھایا جاتا ہوں ، اس طرح سکھایا جاتا ہوں
جب قول وقسم لینے کے لیے ، تکرار کی نوبت آتی ہے
  • مارچ
1985
علیم ناصری
دل بنا جلوہ گہ حسن شہنشاہؐ زمن!                    نکہت افروز ہوا رحمت حق کا گلشن
مصطفےٰؐ جس کے زروسیم ہیں مخزن مخزن        جس کے یاقوت اہرملیں معدن معدن
ہے وہی نام سکوں بخش ومسرت انگیز           تیز ہوجاتی ہے اس نام سے دل کی دھڑکن
نطق بے باک سنبھل اپنی حقیقت پہچان    کون ہے جس کو کہ ہے نعت میں یا رائے سخن
یہ قصیدہ نہیں شاہوں کا بقول عرفی                     ہے دم  تیغ پہ یہ راہ یہ  صحرا ہے نہ بن!
  • مارچ
1989
فضل الرحمن فضل
دل و نظر کو عطا کیفِ سرمدی کر دے
شعورِ زیست کو آگاہِ بندگی کر دے
دلوں میں عشقِ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی روشنی کر دے
کشاکشِ و تگ و دو کی فراہمی کر دے
بساطِ زیست میں پیدا ہما ہمی کر دے
نگاہِ لطف و کرم میں کشادگی کر دے
یہ کشتِ آرزو میری ہری بھری کر دے
  • جنوری
1982
عبدالرحمن عاجز
مٹ گئے کتنے نشاں، یاد نہیں!
مولانا عبدالرحمن عاجز مالیر کوٹلوی
روح تھی سجدہ کناں یاد نہیں
کون تھا جلوہ فشاں یاد نہی
دل پرشوق و نگاہِ بے تاب
تو یہاں تھا کہ وہاں یاد نہیں
صبح دم جو سرگردوں گونجی
آہِ دل تھی کہ اذاں، یاد نہیں
  • ستمبر
1984
نعیم الحق نعیم
 مغموم سی تھی گلشن کی فضا                                                     میں عید مبارک بھول گیا
مسموم سی تھی کچھ آب وہوا                                                  میں عید مبارک بھول گیا
ہر غنچہ وگل تھا شعلہ نما            میں عید مبارک بھول گیا
  • جون
1980
عبدالرحمن عاجز
رہ  وفا میں مراحل تو بے شمار آئے

وفا شعار بہرگام کامگار آئے

کوئی نہ کام زمانے میں کیجئے ایسا

یقین دل کونہ آنکھوں کو اعتبار آئے

جنہیں خبر تھی شہادت کا مرتبہ کیا ہے

گزر کے دیروحرم سے وہ سوئے دار |آئے

کہاں کہاں دل بے تاب لے گیا ان کو

کہاں کہاں تیرے شیدا تجھے پکار |آئے
  • جولائی
1985
عبدالرحمن عاجز
بظاہر دیکھنے میں شادماں حافظ محمد تھے            غم روز جزا سے نیم جاں حافظ محمد تھے
رہا تازیست ورس شرح قرآں مشغلہ انکا           احادیث نبیؐ کے ترجماں حافظ محمدتھے
عبورخاص حاصل تھا انھیں دینی مسائل پر    فقیہ ونکتہ داں تھے خوش بیاں حافظ محمدتھے
خدا کے دین کی خوشبو زمانے بھر میں پھیلائی        حقیقت میں بہارجادواں حافظ محمدتھے
ادارہ تھے و اک علم وعمل کا دورحاضر میں              علوم دین کے گنج گراں حافظ محمدتھے
  • ستمبر
1985
عبدالرحمن عاجز
طائر ذکر پیمبرؐ مائل پرواز ہے                                یہ زمین کیا آسماں بھی فرش پاانداز ہے
آپؐ کےحسن تخاطب میں وہ سوزوساز ہے        زرہ زرہ دو جہاں کا گوش برآزاز  ہے
رفتہ رفتہ پھول کھلتے ہیں چمن میں جس طرح           ہاں لب کے کھلنے کا یہی انداز ہے
قیصروکسریٰ کے ایوانوں میں آئے زلزلے         آپؐ کی دعوت کا مکہ میں ابھی آغاذ ہے
  • دسمبر
1989
عبدالرحمن عاجز
جو خدا کے در کا غلام ہے         وہ  زمانے بھر کا امام ہے
جہاں فرق آیا نہ آج تک         وہ مرے خدا کا نظام ہے
تری ابتداء ہے نہ انتہا             تری ذات کو ہی دوام ہے
نہ مکاں رہے نہ مکیں رہے            یہ جہاں فنا کا مقام ہے
  • اکتوبر
  • نومبر
1985
عبدالرحمن عاجز
یہ ایک بات ہی بس باعث مسرت ہے کہ دل میں تیری تمنا تری محبت ہے
گناہ گار کو فردوس کی بشارت ہے زباں پہ تو اگر قلب میں ندامت ہے
جزائے حسن عمل تو تری عنایت ہے سزائے کفر و بغاوت تری عدالت ہے